وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

’’برگزٹ‘‘ کے منفی اثرات کا آغاز... 2020 تک برطانوی مالیات میں25 ارب پائونڈ خسارے کاخدشہ

جمعرات 10 نومبر 2016 ’’برگزٹ‘‘ کے منفی اثرات کا آغاز... 2020 تک برطانوی مالیات میں25 ارب پائونڈ خسارے کاخدشہ

یہ وقتی ابال اورماہرین معاشیات کے اندازوں کی غلطی ہے اور تمام معاملات جلد ہی معمول پر آجائیں گے،سابق وزیر خزانہ کااستدلال
the-brexit-divorce-process-300x251یورپی یونین سے علیحدگی (برگزٹ)کے فوری بعد برطانیہ کی معیشت پر اس کے منفی اثرات پڑنا شروع ہوگئے ہیں ،جس کا اندازہ برطانیہ میں موجود بڑی بین الاقوامی کمپنیوں خاص طورپر بڑے بینکوں کی جانب سے اپنے دفاتر برطانیہ سے باہر منتقل کرنے کے فیصلوں اور اس پر فوری طورپر عملدرآمد شروع کیے جانے سے ہوتاہے، اگرچہ تھریسا مے کی حکومت اور خاص طورپرسابق برطانوی وزیر خزانہ چانسلر بورس جانسن کا استدلال ہے کہ یہ وقتی ابال اورماہرین معاشیات کے اندازوں کی غلطی ہے اور تمام معاملات جلد ہی معمول پر آجائیں گے لیکن ایسا ہوتا نظر نہیں آتا اور اب برطانیہ کے ایک بااثر تھنک ٹینک نے خبردار کیا ہے کہ رواں برس مارچ میں پیش ہونے والے بجٹ کے بعد سے برطانیہ کی عوامی مالیات میں کمی کے آثار ظاہر ہوئے ہیں جو 2020 تک 25 ارب پائونڈ تک بڑھ سکتے ہیں۔
قبل ازیں انسٹی ٹیوٹ فار فِسکل اسٹڈیز نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ معیشت کی کمزور نمو کی وجہ سے توقع سے کم ٹیکس وصول ہوں گے، جس کے سبب 2019 سے 2020تک 25 ارب پاؤنڈ مزید قرض لینا پڑ سکتا ہے۔ادارے کے ماہرین کا کہنا ہے کہ کمزور معیشت کی پیش گوئی کی وجہ سے خسارے میں خاصا اضافہ ہو سکتا ہے۔برطانیہ کی معیشت میں سست روی بلکہ جمود جیسی کیفیت کی یہ پیش گوئی معیشت کے بارے میں پیش کی جانے والی اس سرکاری رپورٹ سے پہلے آئی ہے جو 23 نومبر کو پیش کی جائے گی۔برطانوی معیشت کو درپیش یہ چیلنج یا یہ صورت حال فلپ ہیمنڈ کے چانسلر بننے کے بعد سے ان کا پہلا اہم امتحان ہو گا۔
آئی ایف ایس کے تحقیق کار ٹامس پوپ نے بھی پیش آمدہ صورتحال کو سنگین قرار دیتے ہوئے خیال ظاہر کیا ہے کہ نئے چانسلر کا پہلا مالیاتی ایونٹ آسان نہیں ہو گا۔ یہ بات یقینی ہے کہ نمو کی پیشگوئی میں کمی لائی جائے گی، جس سے خسارے میں کافی اضافہ ہو گا، چاہے وہ اس کے لیے اخراجات میں مجوزہ کمی لے بھی آئیں۔
فلپ ہیمنڈ پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ وہ اپنے پیش رو جارج اوس برن کی جانب سے 2020 تک کھاتے متوازن کرنے کے ہدف کی بجائے نئے گھروں اور ٹرانسپورٹ پر خرچ کو ترجیح دیں گے۔ جبکہ آئی ایف ایس کے مطابق انھیں اب بڑے فیصلے کرنا پڑیں گے۔ ایک تو یہ کہ وہ معیشت کو تقویت دینے کے لیے اخراجات میں اضافہ یا ٹیکسوں میں کمی لائیں، دوسرے یہ کہ نئے مالیاتی اہداف کا اعلان کیا جائے۔
پوپ نے بھی برطانیہ کی معاشی حالت پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ معاشی صورتِ حال میں فلپ ہیمنڈ کو پھونک پھونک کر قدم رکھنا چاہیے، اور نئے مالیاتی اہداف کو خاصا لچکدار ہونا چاہیے۔اس کے علاوہ کئی اور اداروں نے بھی بریکزٹ کے بعد سے برطانیہ کی نمو کی پیش گوئیوں میں کمی اور افراطِ زر میں اضافے کا امکان ظاہر کیا ہے۔
واضح رہے کہ گزشتہ ماہ آئی ایم ایف نے برطانیہ کی 2017 کی نمو میں 1.1 فیصد کی کمی کی پیش گوئی کرتے ہوئے خبردار کیا تھا کہ معیشت کی بحالی کمزور اور پرخطر ہو گی۔پچھلے ہفتے بینک آف انگلینڈ نے اس سال کے نمو کی پیش گوئی میں ترمیم کرتے ہوئے اسے 1.8فیصد سے کم کر کے 1.5 فیصد کر دیا تھا۔ تاہم برطانوی ہائیکورٹ کی جانب سے بریگزٹ کے معاملے پر پارلیمنٹ سے منظوری کی شرط عاید کیے جانے کے بعدڈالر کے مقابلے میں برطانوی پائونڈکی قدر میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے،اگرچہ برطانوی ہائی کورٹ کے آرٹیکل 50 پر فیصلے کے بعد ڈالر کے مقابلے میں برطانوی پائونڈ کی قدر میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے لیکن ایف ٹی ایس ای (فنانشیل ٹائمز اسٹاک ایکسچینج )میں گراوٹ دیکھی گئی ہے۔فیصلے کے بعد برطانوی پائونڈ کی قدر بڑھ کر 1.24 ڈالر ہو گئی ہے لیکن ایف ٹی ایس ای 100 میں 16 پوائنٹس کی کمی ہوئی ہے۔ ای ٹی ایکس کیپیٹل کے نیل ولسن کا کہنا ہے کہ عدالت کے فیصلے نے بریکزٹ کو مزید مشکل بنا دیا ہے اور پائونڈ کو بڑا دھچکا پہنچایا ہے۔بینک آف انگلینڈ کی تازہ انفلیشن رپورٹ جو گزشتہ روز شائع کی گئی ہے، اس سے پائونڈ بھی اثر انداز ہو سکتا ہے۔توقع ہے کہ بینک کی جانب سے شرح سود کو بھی 0.25 فیصد پر ہی منجمد کر دیا جائے گا لیکن اس کے ساتھ ہی وہ برطانیہ کی معاشی شرح نمو اور افراط زر کے بارے میں اپنی پیش گوئی بہتر بنائے گا۔برطانوی پائونڈ کی قدر میں یورو کے مقابلے میں بھی 1.3 فیصد اضافہ ہوا ہے۔
ایف ٹی ایس ای 100 میں سب سے زیادہ بہتری رائل بینک آف اسکاٹ لینڈ میں ہوئی جو 6.3 فیصد رہی جبکہ رینڈگولڈ ریسورسز میں سب سے زیادہ 6.7 فیصد گراوٹ دیکھی گئی۔موریسنز کے حصص میں بھی 2.1 فیصد اضافہ ہوا ہے۔تاہم یورپی کونسل کے صدر ڈونلڈ ٹسک کا کہنا ہے کہ برطانیہ کو تجارتی فوائد صرف یورپی یونین میں رہنے سے ملیں گے، برطانیہ کے لیے یورپی یونین کو چھوڑنے کا متبادل صرف یہ ہے کہ وہ یورپی یونین کا حصہ رہے۔برسلز میں بات کرتے ہوئے انھوں نے برطانیہ کو خبردار کیا کہ اگر وہ سنگل مارکیٹ تک رسائی چاہتا ہے تو افرادی قوت کی بلاروک ٹوک آمد و رفت اس کی ایک شرط ہوگی۔خیال رہے ڈونلڈ ٹسک برطانیہ کی جانب سے یورپی یونین کو چھوڑنے کے حوالے سے ہونے والے مذاکرات کی صدارت کریں گے۔ڈونلڈ ٹسک کا کہنا تھا کہ یورپی یونین کو چھوڑنے کے لیے چلائی جانے والی مہم میں یہ وعدہ کیا گیا تھا کہ برطانیہ یورپی یونین سے علیحدگی اختیار کرنے کے باوجوداس کے ممبران ممالک کو حاصل تجارتی فوائد سے مستفید ہوتا رہے گا اور وہ یورپ سے تارکین وطن کی آمد کو بھی روک سکے گا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ بھی وعدہ کیا گیا تھا کہ یورپی عدالتوں کے فیصلوں کا بھی ملک پر
اطلاق نہیں ہوگا۔یورپی کونسل کے صدر کے بقول ’ کڑوا سچ یہ ہے کہ برطانیہ کے ای یو کو چھوڑنے سے ہم سب کا نقصان ہوگا، کسی کے لیے کوئی کیک نہیں ہوگا بلکہ صرف کڑوا سرکا اور نمک ہی رہ جائیں گے کھانے کے لیے۔‘ڈونلڈ ٹسک نے اس جانب بھی اشارہ کیا کہ آخر کار ایسا بھی ہوسکتا ہے کہ برطانیہ ای یو کو چھوڑنے کا فیصلہ بدل لے۔


متعلقہ خبریں


دہشت گردوں کو کیفر کردار تک پہنچائیں گے ، آرمی چیف وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ مدرسے پر حملہ دراصل اسلام دشمنی ہے ، اس وقت تک چین سے نہیں بیٹھیں گے جب تک ہم دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کو کیفر کردار تک نہ پہنچائیں۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر)کے مطابق بری فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے اپر دیر مالاکنڈ ڈویژن کا دورہ کیا جہاں کور کمانڈر پشاور لیفٹیننٹ جنرل نعمان محمود نے ان کا استقبال کیا۔آرمی چیف کو استحکام آپریشنز اور بارڈر مینجمنٹ پر بریفنگ دی گئی۔جنرل قمر جاوید باجوہ نے سنگل...

دہشت گردوں کو کیفر کردار تک پہنچائیں گے ، آرمی چیف

ججوں کے انتظامی فیصلے انفرادی نہیں بطور ادارہ تصور کیے جائیں گے ، سپریم کورٹ وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ چیف جسٹس ہائیکورٹس اور ہائیکورٹ ججز کے انتظامی اختیارات فیصلے بطور ادارہ تصور کیے جائیں گے ۔ہائیکورٹ ججز کے انتظامی اختیارات کے حوالے سے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس پاکستان جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بینچ نے 16 مارچ کو فیصلہ محفوظ کیا تھا، سپریم کورٹ نے ہائیکورٹ ججز کے انتظامی اختیارات کے حوالے سے فیصلہ جاری کردیا، 42 صفحات پر مشتمل فیصلہ جسٹس اعجاز الاحسن نے تحریر کیا۔تحریری فیصلے میں کہا گیا کہ چیف جسٹس ہائی کورٹس اور ہائی کورٹ ججز کے ...

ججوں کے انتظامی فیصلے انفرادی نہیں بطور ادارہ تصور کیے جائیں گے ، سپریم کورٹ

قومی اسمبلی،اجلاس بلانے کیلئے اپوزیشن نے اپنی ریکوزیشن واپس لے لی وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

قومی اسمبلی اجلاس بلانے کے لیے اپوزیشن نے اپنی ریکوزیشن واپس لے لی ہے ۔ذرائع نے بتایا کہ اپوزیشن نے اپنی ریکوزیشن اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصرکی جانب سے کرائی جانے والی یقین دہانی کے بعد واپس لی ۔ذرائع کے مطابق اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی جانب سے یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ (آج)اپوزیشن رہنماں کو بات کرنے کا زیادہ موقع دیں گے ۔قومی اسمبلی کا اجلاس غیرمعینہ مدت کیلئے ملتوی کردیا جائیگا۔اپوزیشن کی جانب سے جو ریکوزیشن دی گئی تھی اس میں اجلاس کے لیے اپنا ایجنڈا دیا گیا تھا۔

قومی اسمبلی،اجلاس بلانے کیلئے اپوزیشن نے اپنی ریکوزیشن واپس لے لی

بیمار ہونے پر چمگادڑیں بھی آئسولیٹ ہوجاتی ہیں، تحقیق وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

امریکا میں کی گئی ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ چمگادڑیں جب بیمار ہوتی ہیں تو وہ سماجی دوری اختیارکرلیتی ہیں۔کورونا وائرس کی وبا کے آغاز میں جب ماہرین نے متاثرہ افرادکو سماجی دوری اور قرنطینہ کا مشورہ دیا تو بعض افراد نے اس طریقہ کار پر انگلیاں بھی اٹھائیں اور اسے غیرفطری قرار دیا کہ کسی کو بیمار ہونے پر تنہاکردیا جائے تاہم اب امریکا میں ہونے والی ایک تحقیق میں یہ انکشاف ہوا کہ جھنڈ میں رہنے والی چمگادڑیں بھی بیماری کی صورت میں سماجی دوری اختیار کرتی ہیں۔امریکی اور...

بیمار ہونے پر چمگادڑیں بھی آئسولیٹ ہوجاتی ہیں، تحقیق

گلشن دھماکے کے متاثرین گھر اور معاوضے سے محروم؛ عمارت بھی منہدم کردی گئی وجود - بدھ 28 اکتوبر 2020

گلشن اقبال مسکن چورنگی دھماکے کے متاثرین کو تاحال کوئی معاوضہ اور متبادل جگہ فراہم نہیں کی جاسکی جب کہ عمارت بھی منہدم کردی گئی ہے ۔گلشن اقبال مسکن چورنگی پر واقع عمارت اللہ نور اپارٹمنٹس میں 21 اکتوبر بروز بدھ کو ہونے والے دھماکے کے متاثرین کو تاحال حکومت کی جانب سے کوئی معاوضہ اور رہائش گاہ فراہم نہیں کی گئی، عمارت کے متاثرہ حصے کے اطراف ٹیپ لگا کر سیل کیا ہوا ہے جسکی وجہ سے عمارت سے متصل قائم ایک ریسٹورانٹ اور کیفے بھی گزشتہ ایک ہفتے سے بند پڑا ہے ۔عمارت کے متاثرہ خاندانوں...

گلشن دھماکے کے متاثرین گھر اور معاوضے سے محروم؛ عمارت بھی منہدم کردی گئی

گستاخانہ خاکوں کی اشاعت پر پاکستان کا فرانس سے سفیر واپس بلانے پر غور وجود - بدھ 28 اکتوبر 2020

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے معاملے پر فرانس سے سفیر واپس بلانے پر غورشروع کردیا ہے ،حالیہ دہشتگردی کے واقعات میں بھارت ملوث ہوسکتا ہے ،کشمیر میں جاری بھارتی ظلم و ستم کے باعث پاکستان بھارت سے مذاکرات نہیں کرسکتا۔ نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ فرانس سے اپنے سفیر کو مشاورت کیلئے بلوانا پڑا تو بلائیں گے اور پارلیمنٹ سے رہنمائی لیں گے ۔حالیہ دہشتگردی کے واقعات پر سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اس میں بھا...

گستاخانہ خاکوں کی اشاعت پر پاکستان کا فرانس سے سفیر واپس بلانے پر غور

مودی حکومت کا یوم سیاہ پر کشمیریوں پر ایک اورحملہ وجود - بدھ 28 اکتوبر 2020

مودی حکومت نے مقبوضہ کشمیرمیں یوم سیاہ کے موقع پر ایک اور کشمیری مخالف اقدام اٹھاتے ہوئے منگل کوزمین سے متعلق قانون کو نوٹیفائی کردیااور اب مرکز کے زیر انتظام جموں کشمیر اور لداخ میں کوئی بھی غیر مقامی شہری زمین خرید سکتا ہے ۔تاہم اس میں ذرعی زمین شامل نہیں ہے ۔ بھارتی وزارت داخلہ کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اس سلسلے میں جاری حکمنامے کو مرکز کے زیر انتظام جموں کشمیر اور لداخ ری آرگنازیشن 2020کے نام سے موسوم کیا جائے گا ۔یہ اس سلسلے میں پاس کئے گئے قوانین کا تیسر...

مودی حکومت کا یوم سیاہ پر کشمیریوں پر ایک اورحملہ

27 اکتوبر تحریک حق خود ارادیت کی تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے ،مشال ملک وجود - بدھ 28 اکتوبر 2020

کشمیری حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک نے کہا ہے کہ بھارتی فورسز کشمیریوں کو قتل، قید اور ان کی املاک تباہ کر رہی ہے ۔ اپنے بیان میں کشمیری حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک نے کہا کہ 27 اکتوبر تحریک حق خود ارادیت کی تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے ، بھارتی فوج نے 70 سال سے کشمیر میں لاشوں کا انبار لگا رکھا ہے ۔مشال ملک نے کہا کہ بھارتی فورسز کشمیریوں کو قتل اور قید اور ان کی املاک تباہ کر رہی ہے ، کشمیریوں پر ظلم و ستم کا سلسلہ کب تک چلے گا؟ بہت جلد بھارت اور دنیا کشمیر...

27 اکتوبر تحریک حق خود ارادیت کی تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے ،مشال ملک

بھارت کی پاکستان،چین کو گیدڑ بھبکیاں وجود - منگل 27 اکتوبر 2020

بھارت نیو انڈیا کے بیانیے کی آڑ میں پاکستان اور چین کے مفادات کو نقصان پہنچانے کی دھمکیوں پر اتر آیا ہے۔ چین سے مار کھانے والے بھارتی حکمران بڑی بڑھکیں مارنے لگے، قومی سلامتی کے مشیر اجیت دوول کہتے ہیں کہ جنگ اس ملک لے کر جا سکتے ہیں جہاں سے خطرہ سر اٹھا رہا ہو گا ، انہوں نے جارحیت کی دھمکیوں کو بھارت کے نئے بیانئے سے جوڑ دیا۔ بھارتی مشیر قومی سلامتی اجیت دوول نے نئی ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا کہ اپنی زمین کے ساتھ ساتھ غیرملکی زمین پر بھی جاکر لڑیں گے، چین سے حالیہ ہزیمت اٹھا...

بھارت کی پاکستان،چین کو گیدڑ بھبکیاں

سڈنی میں شدت پسند شخص کا مسجد پر حملہ وجود - منگل 27 اکتوبر 2020

آسٹریلیا کے شہر سڈنی میں نامعلوم شخص نے ترک مسجد پرحملہ کر کے مسجد کی ایک لاکھ ڈالر سے زائد مالیت کی املاک کو نقصان پہنچایا۔غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق نامعلوم شخص نے مسجد کے اندر داخل ہو کر اسکی کھڑکیاں اور فانوس توڑ دیئے، پولیس نے حملہ کرنے والے شخص کو گرفتار کرلیا جسے عدالت میں پیش کیاجائیگا۔آسٹریلوی میڈیا کے مطابق ایک شخص اوبرن گیلی پولی مسجد میں داخل ہوا اور فائرہائیڈرنٹ اور ویکیوم کلینر کے ذریعے مسجد کی املاک کو نقصان پہنچایا۔مسجد ترجمان کا کہنا تھا کہ مسجد میں اس وق...

سڈنی میں شدت پسند شخص کا مسجد پر حملہ

کورونا کیلئے جمع عطیات میں سے عوام پر ایک پیسہ بھی خرچ نہ ہونے کا انکشاف وجود - منگل 27 اکتوبر 2020

کورونا وائرس کے انسداد کے لیے اندرون اور بیرون ملک سے جمع ہونے والے 4.84 ارب کے عطیات میں سے عوام پر ایک پیسہ بھی خرچ نہ ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔اس حوالے سے وفاقی حکومت کی جانب سے قومی اسمبلی میں تفصیلات پیش کی گئیں جس میں حکومت نے اعتراف کیا کہ کورونا وائرس کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے 4ارب 84 کروڑ 24 لاکھ 26 ہزار 121 روپے کی عطیات جمع ہوئے۔ جس میں سے بیرون ملک سے 1 ارب 6 کروڑ 34 لاکھ 8 ہزار 414 روپے اور اندرون ملک سے 3 ارب 78 کروڑ20 لاکھ 77 ہزار 707 روپے کے عطیات موصول ہوئے۔ارک...

کورونا کیلئے جمع عطیات میں سے عوام پر ایک پیسہ بھی خرچ نہ ہونے کا انکشاف

مسلمانوں کی بائیکاٹ مہم سے فرانسیسی صدر پریشان وجود - منگل 27 اکتوبر 2020

فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون نے گھٹنے ٹیک دئیے،فرانس نے خلیجی ممالک سے بائیکاٹ ختم کرنے کا مطالبہ کر دیا ہے۔تفصیلات کے مطابق فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت اور فرانسیسی حکومت کے اسلام مخالف رویئے پر مشرق وسطی کے کئی ممالک میں فرانسیسی مصنوعات کی بائیکاٹ کی مہم چلائی جارہی ہے۔سوشل میڈیا پر بائیکاٹ فرنچ پروڈکٹس اوربائیکاٹ فرانس کے ہیش ٹیگ ٹرینڈ کر رہے ہیں۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق سوشل میڈیا پر فرانسیسی اشیا کے بائیکاٹ کی مہم کے بعد کویت کی مارکیٹوں سے فرانسیسی مصنوعات ...

مسلمانوں کی بائیکاٹ مہم سے فرانسیسی صدر پریشان