وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

شراب خباثت کا خزانہ

جمعرات 30 جون 2016 شراب خباثت کا خزانہ

وزیر خزانہ حسیب درابو

وزیر خزانہ حسیب درابو

22جون 2016ء کوجموں و کشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ جی نے علماءِ کرام اور خطباء حضرات کو تنقید کا نشانہ بناتے ہو ئے کہا کہ یہ لوگ ماحولیات کے بگاڑ،سماجی بدعات اور سنگین مسائل کے خلاف اْف بھی نہیں کرتے ہیں تاہم صنعتی پالیسی اور سینک کالنویوں کے خلاف مساجد میں شور مچاتے ہیں۔اس کے بعداب 25جون 2016ء کو وزیر خزانہ حسیب درابو نے شراب پر پابندی لگانے سے یہ کہتے ہو ئے انکار کیا کہ We cannot enforce our decisions, there is a freedom of choice and let the people decide what they want to do,” he said adding, “Let us live in free society where the choice of one is not enforced on the others.”ہم اپنے فیصلے دوسروں پر مسلط نہیں کر سکتے ہیں لوگوں کو اُن کی پسند اور خواہش کے انتخاب کی مکمل آزادی حاصل ہے لہذا انھیں اپنی پسند کا فیصلہ کرنے کی اجازت ہونی چاہیے ۔مکمل آزاد معاشرے میں رہ کر ایک کی پسند دوسروں پر مسلط نہیں کر دی جاتی ہے ۔

حیرت کا مقام یہ ہے کہ محبوبہ جی کو یہ تک نہیں معلوم کہ یہا ں کے علماء اورخطباء مساجد کے اندر اور باہر کیا کیا کرتے اورکہتے ہیں جس کی وجہ خالصتاََ یہ ہے کہ انھیں نہ علماء سے کوئی تعلق ہے اور نہ ہی خطباء سے کوئی رشتہ ۔ان کے ارد گرد جو لوگ نظام حکومت چلاتے ہیں ان میں بھی بہت کم مسجدو محراب سے واقف ہیں ۔المیہ یہ کہ جہاں وہ خود نہیں جاتی ہے نہ ہی وہ ان کی سنتی ہے انہی پر اس نے اسمبلی میں تنقید کی ۔تنقید نہ بری ہے اور نہ ہی علماء ان باتوں سے مشتعل ہوتے ہیں مگر سوال پیدا ہوتا ہے کہ علماء کو کیا کہنا چاہیے اور کیا کرنا چاہیے اس کا فیصلہ کون کرے گا؟علماء یا وہ حکمران جن کا مذہب سے ایک ’’رسمی‘‘تعلق باقی رہا ہے یقین نہ آئے تو کیا 25جون 2016ء کو وزیر خزانہ حسیب درابو کا یہ شرمناک بیان اس بات کی دلیل ہے کہ ہم شراب پر پابندی نہیں لگا سکتے ہیں ؟

افسوس صد افسوس یہ کہ وزیر خزانہ دوران تقریریہ تک بھول رہے ہیں کہ’’ اصل مسئلہ‘‘ کشمیر میں ’’مرضی مسلط‘‘کرنے سے ہی پیدا ہو چکاہے ۔یہاں 1947ء سے خون کا دریا اسی لئے بہتا آرہا ہے کہ کشمیریوں پر ان کی مرضی کے برعکس مرضی اور خواہش کے خلاف اپنی خواہش دلی والوں نے مسلط کر رکھی ہے جس سے کشمیر میں ایک لاکھ لوگ مارے جا چکے ہیں پر کیا کشمیر جیسی مسلم اکثریتی ریاست میں شراب کو جواز کیلئے ’’چندہزار اشخاص کی پسند‘‘مسلط کرنا ( freedom of choice)کے خلاف نہیں ہے اگر ہے اور یقیناََ ہے تو پھر آپ کے آزاد سماج میں آزاد پسندی کا مطلب کیا ہے حالانکہ کشمیر اسمبلی میں کشمیری مسلمانوں کی ترجمانی کرنے والے ممبران کو ڈوب مرنا چاہیے کہ آج سے کئی سال پہلے سابق وزیر خزانہ عبدالرحیم راتھر اور اب حسیب درابو نے بھی اسمبلی میں انتہائی بھونڈی دلیل پیش کرتے ہو ئے شراب پر پابندی لگانے سے انکار کردیا حالانکہ جموں و کشمیر مسلم اکثریتی ریاست ہے اور یہاں شراب سے لوگ نفرت کرتے ہیں رہے چند پینے والے وہ ایک چھوٹی سی اقلیت ہے جن کی ’’مرضی‘‘کا خیال کسی بھی معاشرے میں ممکن نہیں ہے ۔

اﷲ تعالیٰ مسلمانوں کوشراب سے سختی سے منع کرتے ہوئے فرماتا ہے ’’اے ایمان والو! یہ جو شراب، جوا ، بت اور پانسے سب گندے شیطانی کام ہیں، سو ان سے بچتے رہو تاکہ تم نجات پاؤ، شیطان تو یہی چاہتا ہے کہ تم میں دشمنی اور بیر بذریعہ شراب اور جوئے ڈالے۔اور روکے تم کو اﷲ کی یاد سے اور نماز سے، سو اب تم باز آؤ گے؟ اور حکم مانو اﷲ کا اور حکم مانو رسول کا اور بچتے رہو، پھر اگر تم پھر جاؤگے تو جان لو کہ ہمارے رسول ﷺ کا ذمہ صرف پہنچادینا ہے کھول کر‘‘۔(المائدہ۔9،19،(29حضرت ابو سعید خدری ؓسے روایت ہے کہ ہمارے پاس ایک یتیم کی شراب رکھی ہوئی تھی، میں نے اس کے بارہ میں(پابندی لگتے ہی) آپﷺ ا سے دریافت کیا (آپؐ نے اس شراب کو ضائع کرنے کا حکم دیا) میں نے عرض کیا کہ وہ تو ایک یتیم کی ملکیت ہے؟ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ: اس کو بہادو‘‘(مشکوٰۃ)حضرت جابر ؓسے روایت ہے، آنحضرت ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ : ہر نشہ آور مشروب حرام ہے اور اﷲ تعالیٰ نے عہد کررکھا ہے کہ شراب پینے والوں کو دوزخیوں کے زخموں کی گندگی پلائی جائے گی، صحابہ کرامؓ نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! ’’طینۃ الخبال‘‘ کیا چیز ہے؟ فرمایا کہ: دوزخیوں کاپسینہ یا دوزخیوں کا پیپ ہے۔(مشکوٰۃ)نبی کریم ﷺ نے فرمایاجو شخص ایک بار شراب پئے اﷲ تعالیٰ چالیس دن تک اس کی نماز قبول نہیں فرمائیں گے، اگر وہ توبہ کرلے تو اس کی توبہ قبول کرلی جائے گی، دوبارہ شراب پئے تو پھر چالیس دن تک اس کی نماز قبول نہیں ہوگی اور توبہ کرلے تو اﷲ تعالیٰ اس کی توبہ قبول فرمالیں گے، سہ با ر شراب پئے تو پھر اس کی نماز چالیس دن تک قبول نہیں ہوگی اور توبہ کرلے تو توبہ قبول ہوگی اور اگر چوتھی بار شراب نوشی کا مرتکب ہو تو پھر اس کی نماز چالیس دن تک قبول نہیں ہوگی اور اب اگر توبہ بھی کرنا چاہے تو اندیشہ ہے کہ اس کی توفیق نہ ہو، بلکہ اسی جرم پر اس کا خاتمہ ہو، اور اﷲ تعالیٰ اسے ’’نہرِ خبال‘‘ (جس سے دوزخیوں کی پیپ بہتی ہے) پلائیں گے‘‘۔(مشکوٰۃ)

ایک صحابی نے عرض کیا کہ یا رسول اﷲ! ہم لوگ سرد علاقے کے باشندے ہیں اور محنت بھی بہت کرتے ہیں، سردی اور مشقت کا مقابلہ کرنے کے لئے ہم گیہوں سے ایک مشروب تیار کرکے استعمال کیا کرتے ہیں، فرمایا: کیا وہ نشہ آور ہوتا ہے؟ عرض کیا، جی ہاں! نشہ تو اس میں ہوتا ہے، فرمایا: تو پھر ا س سے اجتناب لازم ہے، عرض کیا: لوگ تو اس کو ترک نہیں کریں گے، فرمایا: اگر وہ لوگ اس کو نہیں چھوڑتے تو ان سے جنگ کرو‘‘۔(مشکوٰۃ)حضرت ابن عمرؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺنے ارشاد فرمایا: اﷲ تعالیٰ نے شراب، اس کے پینے والے، اس کے پلانے والے، اس کے خریدنے والے، اس کے بیچنے والے، اس کے کشید کرنے والے،اس کے کشید کرانے والے، اس کے اٹھانے والے اور جس کی طرف لے جائی جائے (ان سب) پر لعنت کی ہے اورایک روایت میں ہے کہ اس کی قیمت کھانے والے پر بھی لعنت کی ہے‘‘۔(ابوداؤدو،ابن ماجہ)حضرت ابن عباس سے روایت ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا: اﷲ تعالیٰ نے یہودیوں پر تین بار لعنت فرمائی ہے، اﷲ تعالیٰ نے ان پر چربی کو حرام کیا تو انہوں نے اس کو بیچ کر ان کی قیمتوں کو کھانا شروع کردیا، اﷲ تعالیٰ جب کسی قوم پر کسی چیز کے کھانے کو حرام کرتے ہیں تو اس کی قیمت کو بھی حرام کرتے ہیں ۔(ابوداؤد)

ان حوالوں کا مطلب صرف یہ بتانا ہے کہ مسلم اکثریتی ریاست میں جو چیز اکثریتی عقائد اور مزاج سے متصادم ہے اور کشمیری مسلمان اس پر پابندی کے حق میں ہوں تو پھر ان کی مرضی کا احترام کیوں نہیں ؟جہاں تک ہندؤ برادری کا تعلق ہے حسیب درابو اور محبوبہ جی یہ بھی بتادیں کہ کون ریاستی ہندؤباشندہ اس لعنت کے چلن اور جواز کے حق میں ہے ؟ممکن ہے کہ ایک ’’محدودجموی ہندؤ کاروباری اقلیت‘‘ اس کے فروغ کے حق میں ہو جن کی اکثریت کے مقابلے میں کوئی حیثیت نہیں ہے اس لئے کہ ریاستی آئین کے مطابق اگر کسی بھی ’’الیکشن اُمیدوار ‘‘کوچناؤ کے وقت سو میں اکاون(51)بیوقوف،احمق،جاہل اور پاگل اپنا ووٹ دیدے تو وہ اُس امیدوار کے مقابلے میں کامیاب قرار پائے گا جس کو صرف انچاس(49)عقل مند ،دانشور،مصنفین،علماء ،ڈاکٹر،انجینئر اور وکلانے ووٹ دیا ہو ۔کیا حسیب درابو ایک آزاد سوسائٹی میں اکثریت کا احترام ممکن بنا پائیں گے ؟ویسے بھی شراب کے مسلئے میں کشمیر اسمبلی میں موجود مسلمان ممبران کو ڈوب مرنا چاہیے کہ ’’بہار جیسی ہندؤ اکثریتی ریاست‘‘اس کے مضر صحت اور سماجی و معاشرتی بگاڑ کے لئے پابندی لگانے کے لئے متحد ہو کر پابندی لگواسکتے ہیں مگر سرزمین اولیاء کے سیاستکار نہیں ۔شاید اس لئے کہ یہاں ایوانوں اور اونچے عہدوں پر تعینات بیروکریسی خود اس کی خوگر ہے لہذا وہ اس پر پابندی کے حق میں کیسے ہو سکتے ہیں ؟

امریکہ محکمہ انصاف کے بیورو آف جسٹس کے ایک سروے کے مطابق امریکہ میں صرف1996ء کے دوران میں زنا بالجبرکے روزانہ 2713 واقعات پیش آئے، اعدا و شمار کے مطابق ان زانیوں میں اکثر یت ان کی تھی جو ارتکاب جرم کے وقت نشے میں مدہوش تھے۔ سروے کے مطابق عورتوں سے چھیڑ چھاڑ کیواقعات بھی زیادہ تر شراب نوشی کی حالت میں ہی کئے گئے ہیں۔حساب و کتاب کے اعتبار سے 8فیصد امریکی محرمات سے مباشرت اسی شراب نوشی کی وجہ سے ہوتی ہے۔ ہماری ریاست کا المیہ یہ ہے کہ یہاں جائز مطالبات کو ’’ہندؤمسلم ‘‘یا ’’ضدِ ہندوستان‘‘کے آئینے میں دیکھا جاتا ہے شاید کشمیر کے ہندنواز سیاستدانوں کو یہ خلش بھی اضطراب میں ڈالتی ہے کہ کہیں ان کا اندراج بھی انتہا پسندوں کی کھاتے میں نہ کیا جائے اس لئے کہ یہاں کرسیاں اور مناصب کشمیریوں کو صلواتیں سنانے سے ہی فراہم کی جاتی ہیں ،سچائی یہ ہے کہ بھارت بھر میں کشمیری مسلمانوں کو زچ کرنے کا فیشن عام ہے اور یہ بھارت نوازی کی دلیل سمجھی جاتی ہے ۔زیادہ سیکولر کا مطلب یہاں یہی لیا جاتا ہے کہ کشمیریوں کی مرضی کے خلاف بات کی جائے ۔پھر جب اس ناانسافی پر یہاں کے علماء تنقید کرتے ہیں تو وزیر اعلیٰ کو بھی اشتعال آتا ہے کہ ممبر و محراب پر سینک اور ہندؤ کالنیوں کے خلاف تقریریں کی جاتی مگر سوشل اشوز پر نہیں حالانکہ یہ ہمالیہ سے بھی بڑا جھوٹ ہے کہ کشمیر کے علماءِ کرام اور خطباء ان مسائل پر خاموش رہتے ہیں ۔ان سے کشمیر کے بعض آزادی پسند ناراض ہی اسی بات پر ہیں کہ وہ سوشل اشوز پر بہت بولتے ہیں مگر ہندوستان کی جارحیت کے خلاف نہیں ۔بہتر ہے کہ شراب پر پابندی لگا کرجموں و کشمیر کو اس لعنت سے نجات دیکر تاریخ میں اپنا نام اچھوں میں درج کرانے کا آغاز محبوبہ جی اور ان کی حکومتی ٹیم ہی کریں اس لئے کہ آج نہیں تو کل اس پر پابندی لگنی ہی ہے عقلمندی کا تقاضا یہ ہے کہ یہ نیکی آپ لوگ ہی اپنے نامہ اعمال میں درج کراکے دنیا میں نیک نام ہو جائے، نہیں تو آپ کو ہر وقت علماء اور خطباء کی تنقید سننے اور پڑھنے کے لئے تیار رہنا چاہیے اس لئے کہ ان کی خاموشی اﷲ تعالیٰ کے نزدیک ناقابل قبول جرم ہے جس کے وہ متحمل نہیں ہو سکتے ہیں ۔


متعلقہ خبریں


کہیں بعد میں پچھتانا نہ پڑے!!! شیخ امین - منگل 06 ستمبر 2016

تاریخ گواہ ہے کہ 2002 ء میں گجرات میں سنگھ پریوار کے سادھو نریندر مودی (جو اس وقت وہاں وزیر اعلیٰ تھے) کی ہدایات کے عین مطابق کئی ہزار مسلمان مرد عورتوں اور بچوں کو قتل کر دیا گیا تھا۔ عورتوں کی عزت کو داغدار کرنے کے علاوہ حاملہ عورتوں کے پیٹ چاک کر دیے گئے تھے۔ ہزاروں رہائشی مکانات نذر آتش کیے گیے۔ پولیس نہ صرف تماشائی بلکہ کئی مقامات پر مسلمانوں کے قتل عام میں بلوائیوں کی صفوں میں شامل ہوئی اور ایسی سیاہ تاریخ رقم کی کہ خود بھارتی معتدل ہندو طبقہ بھی شرمسار ہوا۔ 26مئی 2014س...

کہیں بعد میں پچھتانا نہ پڑے!!!

جواب دو!!! شیخ امین - جمعه 02 ستمبر 2016

سقوط ڈھاکا ہوا۔ کشمیری درد و غم میں ڈوب گئے۔ ذولفقار علی بھٹو کو سولی پر چڑھایا گیا تو کشمیری ضیاء الحق اورپاکستانی عدالتوں کے خلاف سڑکوں پرنکل آئے۔ پاکستان نے ورلڈ کپ میں کامیابی حاصل کی تو کشمیر یوں نے کئی روز تک جشن منایا۔ جنرل ضیاء الحق ہوائی حادثے میں شہید ہوئے تو کشمیر یوں نے اس کا بھی ماتم منایا۔ پاکستان نے ایٹمی دھماکے کیے تو کشمیریوں نے کئی روز تک جانوں کی پرواہ کیے بغیرگلیوں اور کوچوں میں رقص کیا، مٹھائیاں بانٹیں۔ اسکے برعکس بھارت کے ساتھ نفرت کا اظہار بار بار کیا۔ ...

جواب دو!!!

مقبوضہ کشمیر میں 44 ویں روز بھی کرفیو اور بندشیں سختی کے ساتھ برقرار شیخ امین - پیر 22 اگست 2016

مقبوضہ کشمیر میں اتوار کو مسلسل44ویں روز بھی ہڑتال ، دن ورات کرفیو اور بندشوں کا سلسلہ سختی کے ساتھ جاری رہنے کے باعث معمول کی زندگی مفلوج ہو کر رہ گئی ہے۔جبکہ شمال وجنوب میں فورسز کے ہاتھوں شبانہ چھاپوں، توڑ پھوڑ ، مارپیٹ اور گرفتاریوں کے بیچ احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ بھی جار ی رہا جس دوران مرد و خواتین نے قریہ قریہ احتجاجی جلسوں کا اہتمام کرنے کے علاوہ جلوس اور ریلیاں بھی نکالی اور کئی مقامات پر کھلے آسمان تلے نماز یں بھی ادا کی گئیں ۔رواں آزادی حامی احتجاجی لہر کے مرکز جنوب...

مقبوضہ کشمیر میں 44 ویں روز بھی کرفیو اور بندشیں سختی کے ساتھ برقرار

کشمیر میں اسرائیل طرز کی ہندو بستیاں بنانے کا منصوبہ!!!! وجود - جمعرات 05 مئی 2016

آل پارٹیز حریت کا نفر نس (گیلانی)نے حکومتِ ہند کے آبادکار پنڈتوں کے لیے کمپوزٹ ٹاؤن شپ قائم کرنے کے منصوبے پر بضد رہنے کو بلاجواز قرار دیتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ کشمیریوں کو مذہب کے نام پر تقسیم کرنے اور پنڈتوں کو سماج سے الگ تھلگ کرنے کی کسی بھی صورت میں اجازت نہیں دی جائے گی اور دونوں برادریاں مل کر اس خطرناک منصوبے کو ناکام بنائیں گی۔ ذرائع ابلاغ کے نام جاری اپنے ایک بیان میں انہوں نے واضح کیا ہے کہ پنڈت کشمیری سماج کا ایک حصہ ہیں اور کوئی بھی فرد یا گروہ ان کی وادی وا...

کشمیر میں اسرائیل طرز کی ہندو بستیاں بنانے کا منصوبہ!!!!

مسئلہ کشمیر کو نقصان پہنچانے والا کوئی قدم نہیں اُٹھایا جائے گا! وزیراعظم نوازشریف کا کشمیری رہنما یاسین ملک کو جوابی خط وجود - جمعرات 05 مئی 2016

دہلی میں پاکستانی سفارت خانے کے ڈپٹی ہائی کمشنر سید حیدر شاہ اور سفارت خانے کے فرسٹ سیکریٹری نے جموں و کشمیرلبریشن فرنٹ کے علیل چیئرمین محمد یاسین ملک سے فورٹس ہسپتال دہلی میں ملاقات کی ہے۔ہائی کمشنر نے اس موقع پر محمدیاسین ملک کو پاکستانی وزیر اعظم محمد نواز شریف کا خط بھی پہنچایا جو انہوں نے محمدیاسین ملک کے 12جنوری 2016ء کو لکھے گئے خط کے جواب میں لکھاہے۔ محمدیاسین ملک نے مذکورہ خط میں حکومت پاکستان اور وزیر اعظم پاکستان پر زور دیا تھا کہ وہ گلگت بلتستان کی آئینی پوزیشن کو...

مسئلہ کشمیر کو نقصان پہنچانے والا کوئی قدم نہیں اُٹھایا جائے گا! وزیراعظم نوازشریف کا کشمیری رہنما یاسین ملک کو جوابی خط

حریت کی موجودگی میں کبھی قیادت کا بحران پیدا نہیں ہوگا: سید علی گیلانی وجود - منگل 29 مارچ 2016

بزرگ رہنما اوتحریکِ حریت جموں و کشمیر کے سربراہ سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ ’’تحریکِ حریت جموں و کشمیر‘‘ اگرچہ ریاست کے طول وعرض میں پھیلی ایک مضبوط اور فعال تنظیم ہے تاہم اس کو مز ید وسعت دینا اور زیادہ فعال بنانا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے، جس کی طرف فوری توجہ کرنا ناگزیر ہے۔ معرف نیوز ایجنسی کشمیر نیوز نیٹ ورک کے مطابق سیدعلی گیلانی نے ’’تحریکِ حریت‘‘ کی تاریخ بیان کرتے ہوئے کہا ہے کہ 2004 میں اس تنظیم کو دوسری درجنوں پارٹیوں میں کسی اضافے کے طور پر نہیں بنایا گیا ہے اور نہ ...

حریت کی موجودگی میں کبھی قیادت کا بحران پیدا نہیں ہوگا: سید علی گیلانی

آزادی کشمیر کی تحریک ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کی تحریک ہے! شیخ امین - منگل 16 فروری 2016

انجم زمرودہ حبیب اسلام آباد (اننت ناگ) سے تعلق رکھنے والی ایک ایسی خاتون ہیں جنہوں نے 80ء کی دہائی میں ہی وومینز ایسوسی ایشن بنائی تھی، جہاں سے وہ خواتین کے مختلف سماجی مسائل کو حل کرنے میں ایک کردار ادا کررہی تھی۔ اعلیٰ تعلیم یافتہ زمردہ جی، حنفیہ کالج اسلام آباد میں اس وقت ایک معلمہ کی حیثیت سے کام کررہی تھیں، جب کشمیری مردو زن سڑکوں پر نکل آئے اور پوری قوت سے آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف مظاہرے کرنے لگے۔ کشمیری جوانوں نے بھارتی ہٹ دھرمی توڑنے کے لیے بندوق اٹھانے کا فی...

آزادی کشمیر کی تحریک ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کی تحریک ہے!

یوم یکجہتی پر پاکستانی قوم کا پیغام : کشمیری تنہا نہیں شیخ امین - هفته 06 فروری 2016

5 فروری کو پاکستان بھر میں پورے جوش و خروش کے ساتھ یوم یکجہتی کشمیر منا یا گیا۔وزیر اعظم پاکستان محمد نواز شریف نے اس موقع کی مناسبت سے آزاد کشمیر اسمبلی سے خطاب کیا اور کشمیری عوام کو یقین دلایا کہ پاکستان ان کی جدوجہد کو قدر کی نگا ہ سے دیکھتا ہے اور جب تک مسئلہ کشمیر حل نہیں ہوتا،اس خطے میں امن قائم نہیں ہوسکتا ۔انہوں نے اقوام متحدہ کو بھی تنقید کا نشا نہ بنا تے ہوئے کہا کہ دنیا کو ان سے پوچھ لینا چا ہئے کہ یہ مسئلہ اب تک حل کیوں نہیں ہوا۔ قائد حریت سید علی گیلانی ...

یوم یکجہتی پر پاکستانی قوم کا پیغام : کشمیری تنہا نہیں

پروفیسر خورشید احمد کی کتاب ’تحریکِ آزادیٔ کشمیر‘ شائع وجود - جمعه 05 فروری 2016

انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز (آئی پی ایس) کے بانی سربراہ اور سابق سینیٹر پروفیسر خورشید احمد کی نئی کتاب ”تحریکِ آزادیٔ کشمیر: بدلتے حالات اور پاکستان کی پالیسی“ شائع ہو گئی ہے۔ انسٹی ٹیوٹ کے اشاعتی بازو ’آئی پی ایس پریس‘ کی شائع کردہ اس کتاب کا اجراء خصوصی طور پر امسال یومِ کشمیر کے موقع پر کیا گیا ہے۔ کتاب میں مصنف نے جموں و کشمیر کے مسئلہ کی تاریخی، اصولی اور آئینی نوعیت، اقوام متحدہ کی نااہلی اور عالمی طاقتوں کی بے حسی اور دو عملی کے ساتھ ساتھ خود حکومتِ پاکستان اور سو...

پروفیسر خورشید احمد کی کتاب ’تحریکِ آزادیٔ کشمیر‘  شائع

میرا کشمیر چھوڑ دو!!! شیخ امین - جمعرات 04 فروری 2016

باور یہ کیا جا رہا تھا کہ وقت گزرنے کے ساتھ کشمیری عوام حالات سے مایوس ہو کر تھک جائیں گے ،انہیں پُلوں ،ہسپتالوں ،ریلوے ٹریک ،سڑکوں کے نام پر ایک نئی اقتصادی ترقی کا سراب دکھا کر نظریات سے برگشتہ کر دیا جائے گا۔کشمیر کی نئی نسل اپنے بزرگوں کے مقابلے میں زیادہ عملیت پسندی کا مظاہرہ کرے گی۔ بھارت کا انفارمیشن ٹیکنالوجی میں آگے نکل جانا ،اقتصادی اعتبار سے مضبوط تر ہوجانا کشمیر کی نئی نسل کی آنکھوں کو خیرہ کر دے گا ۔لیکن یہ قیاس آرائیاں اور اندازے وقت نے غلط ثابت کئے۔ بھارتی ...

میرا کشمیر چھوڑ دو!!!

وفا کے بدلے جفا کیوں!!! شیخ امین - منگل 02 فروری 2016

فروری کا مہینہ پاکستان میں کشمیریوں سے یک جہتی کا پیغام لے کر آتا ہے ۔پانچ فروری کو پاکستان میں کراچی سے خیبر تک اہل پاکستان کشمیری عوام اور تحریک آزادیٔ کشمیر سے یک جہتی کا اظہار جلسے جلوس کے ذریعے کرتے ہیں۔یہ سلسلہ 1990ء سے جاری ہے اور اس کی ابتداء قاضی حسین احمد مرحوم کی کال سے ہوئی تھی ۔اس کے بعد پاکستان میں اس دن کو سرکاری سطح پر منایا جانے لگا۔اس دن ریاست پاکستان،سیاسی جماعتیں اور عوام ،کشمیریوں کو یہ باور کراتے ہیں کہ وہ آزادی اور حق خودارادیت کی جدوجہد میں ان کے ساتھ ...

وفا کے بدلے جفا کیوں!!!

بھارت کا یوم جمہوریہ، آزاد و مقبوضہ کشمیر سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ شیخ امین - بدھ 27 جنوری 2016

آل پا رٹیز حریت حریت کانفرنس کی کی اپیل پر بھارت کے یوم جمہوریہ کے موقع پر کشمیریوں نے آزاد و مقبوضہ کشمیر سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ منایا۔ بھارت کے خلاف احتجاجی جلسے، جلوس، ریلیاں اور مظاہرے کیے گئے اور جدو جہد آزاد ی میں مصروف کشمیریوں اور متحدہ جہاد کونسل کو یقین دلایا گیا کہ پوری پاکستانی قوم اور پاکستان و آزاد کشمیر کی جملہ قیادت ان کی پشت پر کھڑی ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں حریت پسندوں کی کال کے پیش نظر مکمل ہڑتال سے معمول کی زندگی مفلوج ہوکر رہ گئی، دکانیں، کاروباری ا...

بھارت کا یوم جمہوریہ، آزاد و مقبوضہ کشمیر سمیت دنیا بھر میں یوم سیاہ