وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

جہانگیر صدیقی کا پاکستانی معیشت کو اپاہج کرکے "گاڈ فادر "بننے کا خواب (قسط اول)

جمعه 12 فروری 2016 جہانگیر صدیقی کا پاکستانی معیشت کو اپاہج کرکے

jehangir-siddiqui

افواجِ پاکستان دہشت گردوں کے نیٹ ورک کو تباہ کرنے میں عظیم کامیابیاں حاصل کر رہی ہیں لیکن اب بھی وطنِ عزیز میں موجود اُن گروہوں کی گردنیں دبوچنا باقی ہے جو ملک کی مالیاتی مارکیٹوں کو تباہ کرنے میں ملوث رہے اور عام سرمایہ کاروں اور عوام کو بڑے پیمانے پر ٹھگ رہے ہیں۔ اسٹاک مارکیٹ عموماً کسی بھی معیشت کی صحت و ترقی کو ظاہر کرتی ہے اور کارپوریٹ گورننس کے عمدہ اقدامات ہی دیگر ممالک میں پاکستان کو ساکھ کو بہتر بناتے ہیں، جس سے غیر ملکی سرمایہ کاری بھی متوجہ ہوتی ہے۔ مگر جے ایس گروپ نے 2006ء سے 2008ء تک پاکستان کی اِن ہی مالیاتی مارکیٹوں کو ہدف بنایا اور ایسا بحران تخلیق کیا، جس نے بین الاقوامی سطح پر ہماری ساکھ کو زک پہنچائی، سرمایہ کاروں بالخصوص غیر ملکی سرمایہ کاروں کے اعتماد کو بُری طرح مجروح کیا اور یوں قومی معیشت کو بہت بڑے پیمانے پر دھچکا پہنچایا۔ جے ایس بینک کے اشتہار میں عام طور پر ایک جملہ “ابھی بڑھنا ہے آگے اور” استعمال ہوتاہے۔ مگر جے ایس گروپ اور اُس کے سربراہ جس طرح آگے بڑھ رہ ہیں، اُس سے ماریو پوزو کے ناول کا “گاڈ فادر” ذہنوں میں اُبھرتا ہے۔ جو مالیاتی اداروں میں گھس کر سب کچھ اپنے کنٹرول میں لینے اور تمام سرگرمیوں کو اپنے جنبشِ ابرو سے چلانے کے لئے کمربستہ رہتا ہے۔ اطالوی طرز کی ان مافیاؤں کا مقابلہ کرنے میں سرکاری ادارے اس لئے ناکام رہتے ہیں کہ تمام کے تمام اداروں میں کہیں نہ کہیں “گاڈ فادر “نے اپنے لوگوں کے ذریعے پنجے گاڑ رکھے ہوتے ہیں۔ جے ایس گروپ کے سربراہ جہانگیر صدیقی نے اسی طرز پر ملک کےاندر اپنی معاشی سرگرمیوں سے ایک ایسی ناہمواری کو جنم دے دیا ہے جس نے سرمائے کی شفاف حرکت کو ناممکن بنا دیا ہے۔ جبکہ جے ایس گروپ نے وزیر اعظم ہاؤس سے لے کر احتساب کے تمام سرکاری اداروں کو بھی تعلقات کی ایک منافع بخش آکاس بیل میں جکڑ لیا ہے۔ اس ضمن میں اُن کی رشتے داریاں بھی اُن کی زبردست معاونت کررہی ہیں، یوں جہانگیر صدیقی کے سیاسی، صحافتی اور سرکاری اداروں کے روابط نے مل کر ایک ایسابھیانک منظرنامہ بنا دیا ہے جس میں شفافیت، مسابقت کا صحت مند ماحول اور احتساب کا غیر جانبدارنہ عمل تقریباً ناممکن بن چکا ہے۔ جب سب کچھ “گاڈ فادر” کی مرضی سے ہونا ہے تو پھر عدالتیں بھی کس طرح اُن کے ارادوں سے بچ سکتی ہیں۔ پاکستان کو مالیاتی اداروں اور معیشت کا یہ مجموعی ماحول بہت جلد ایک بڑے قومی بحران میں مبتلا کرنے والا ہے۔ چنانچہ یہ ضروری ہو گیا ہے کہ جہانگیرصدیقی کے خطرناک عزائم پر مبنی سنگین مالیاتی جرائم کو بے نقاب کیا جائے۔ وجود ڈاٹ کام کو میسر دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ جہانگیر صدیقی نے ڈاکٹر عاصم حسین سے لے کر ہمیش خان، گجرات کے چودھریوں، موجودہ اور سابقہ بیوروکریٹس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں، تک پھیلے اپنے غیر معمولی اور منافع بخش روابط استعمال کرتے ہوئے پاکستانی معیشت کو کس کس طرح اور کہاں کہاں سے دبوچا؟
mir-shakeel
پاکستان دہائیوں سے دہشت گردی کے نشانے پر ہے۔ اس کے اسکول، بازار، مساجد، گرجے، نقل و حمل کا نظام اور سب سے بڑھ کر خود سیکورٹی فورسز ان دہشت گردوں کا ہدف ہیں جو مختلف ذرائع بالخصوص بھارت سے فنڈنگ حاصل کرتے ہیں۔ ہزاروں شہریوں اور سیکورٹی اہلکاروں نے اس پاک سرزمین کے عوام اور اس کی املاک کو بچاتے ہوئے شہادت پائی ہے۔ باچا خان یونیورسٹی پر حملے میں عسکری اداروں کی تازہ تحقیقات نے یہ ثابت کردیا ہے کہ افغانستان میں بیٹھ کر اس حملے کی میزبانی کس طرح بھارت نے کی ہے؟ ایک ایسے وقت میں جب سیکورٹی فورسز کی مکمل توجہ مسلح دہشت گردوں سے نمٹنے پر ہے، ان گروہوں کی سرگرمیوں پر توجہ کم ہوگئی ہے جو پاکستان کے اندر مالیاتی مارکیٹوں کو تباہ کرنے، عام سرمایہ کاروں اور عوام کو بڑے پیمانے پر متاثر کرنے کی سنگین سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ بد دیانتی اور لوٹ مار سے حاصل کیا گیا یہی پیسہ بعد میں ریاست مخالف سرگرمیوں میں استعمال ہوتا ہے۔

جے ایس گروپ نے اپنی بیشتر دولت خفیہ تجارت، کارپوریٹ چھینا جھپٹی اور پاکستانی پنشن فنڈز، خیراتی ٹرسٹ اور ایک عام پاکستانی کی اسٹاک مارکیٹ میں کی گئی سرمایہ کاری کو لوٹ کر اکٹھی کی ہے

جہانگیر صدیقی کی زیر قیادت جے ایس گروپ کی پوری تاریخ مختلف مالیاتی اسکینڈلز اور مشتبہ کاروباری ضابطوں سے داغدار ہے۔ انہوں نے اپنی بیشتر دولت خفیہ تجارت، کارپوریٹ چھینا جھپٹی اور پاکستانی پنشن فنڈز، خیراتی ٹرسٹ اور ایک عام پاکستانی کی اسٹاک مارکیٹ میں کی گئی سرمایہ کاری کو لوٹ کر اکٹھی کی ہے۔ بدعنوانی کے مختلف ذرائع سے لوٹی گئی دولت میں یہی ایک تحقیق طلب مسئلہ نہیں ہوتا کہ یہ کیسے حاصل کی گئی۔ بلکہ پاکستان ایسے ملکوں میں جہاں دہشت گردی نے پنجے گاڑ رکھے ہو، اور بے پناہ دولت نے اپنے استعمال کے غیر قانونی ملکی اور غیر ملکی راستے کھوج رکھے ہیں، وہاں ایسی غیر قانونی دولت کے استعمال کے مقامات کو بھی تلا ش کرنے کی ضرورت ہے۔ جے ایس گروپ پر الزام ہے کہ اُس نے غیر قانونی فائدے سمیٹنے کے لیے نہ صرف مالیاتی قواعد کے خلاف اپنے رابطوں کو استعمال کیا بلکہ اُس نے کچھ ایسے کام بھی مشکوک طریقے سے سرانجام دیئے، جو مبینہ طور پر مالیاتی دہشت گردی کے مرتکبین کے سہولت رساں کے زمرے میں بھی شمار ہوتے ہیں۔ وہ بینک آف پنجاب کے بورڈ میں شامل ہونے کے باعث بینک کے سابق صدر ہمیش خان اور چودھری برادران (چودھری پرویز الٰہی اور شجاعت حسین) کے سنگ سنگ کام کرتے رہے ہیں۔ وہ 1991ء سے 2009ء تک پی این ایس سی کے بورڈ کا بھی حصہ تھے اور وہاں بھی مختلف فراڈ اور بے ضابطگیوں کے متعددمعاملات میں ملوث رہے، جس میں مونس الٰہی کے ساتھ بحری جہاز خرید کر قومی خزانے کو نقصان پہنچانا بھی شامل ہے۔ انہوں نے اپنی جے ایس انوسٹمنٹس میں 2 ارب روپے کی سرمایہ کاری بھی غیر قانونی طور پر حاصل کی، جس کی آڈیٹر جنرل آف پاکستان نشاندہی کر چکے ہیں اور اب یہ معاملہ تحقیقاتی اداروں میں زیر تفتیش ہونے کے باوجود جہانگیر صدیقی کے بھاری بھرکم تعلقات کے باعث دبا رہتا ہے۔

جے ایس گروپ پر الزام ہے کہ اُس نے غیر قانونی فائدے سمیٹنے کے لیے نہ صرف مالیاتی قواعد کے خلاف اپنے رابطوں کو استعمال کیا بلکہ اُس نے کچھ ایسے کام بھی مشکوک طریقے سے سرانجام دیئے، جو مبینہ طور پر مالیاتی دہشت گردی کے مرتکبین کے سہولت رساں کے زمرے میں بھی شمار ہوتے ہیں

جہانگیر صدیقی نے مختلف اداروں میں حصص خریدے، غیر قانونی اسٹاک مارکیٹ چال بازیوں اور خفیہ تجارت کے ذریعے بنایا گیا پیسہ استعمال کیا، اپنے مختلف اداروں اور میوچوئل فنڈز کے ذریعے اور بعد میں ہدف پر موجود اداروں کی ملکیت حاصل کرلی۔ ایک مرتبہ ان کے پاس ایک ادارے کے حصص تھے، انہوں نے ادارے کے مالکان اور انتظامیہ کو مختلف طریقوں سے دباؤ میں لیا تاکہ وہ اُن کے ساتھ غیر قانونی سرگرمیوں میں شریک ہو نے پر مجبور ہوں۔ جس میں سے ایک ادارے سے پیسہ نکالنے اور حصص میں تجارت کے دھندے میں شامل ہو نا بھی شامل ہے۔ یہ طریقہ دراصل ایک پیٹرن بن کر سامنے آتا ہے جس میں اگر ادارہ بدعنوان نہ ہو تو اُسے مختلف طریقوں سے بلیک میل کیا جاتا ہے، یہاں تک کہ اُسے عدالت میں گھسیٹ لیا جاتا ہے، جہاں مختلف عدالتی مراحل کی ایک پوری سائنس ہے جس پر جہانگیر صدیقی اور اُن کے ایک مخصوص ٹولے کی پوری مہارت اور گرفت پائی جاتی ہے۔ اس طرح وہ مزاحم کاروباری اداروں کے اہم افراد کا جینا دوبھر کر دیتے ہیں۔ (اس کی پوری تفصیلات اور مثالیں نام بہ نام اور مقام بہ مقام اپنی جگہ پر آئیں گی)۔ یہ گزشتہ 25 سال سے زیادہ عرصے سے ہو رہا ہے اور کئی اچھے ادارے جو پاکستان کے لیے ملازمت کے مواقع دے رہے تھے اور اقتصادی ترقی میں اپنا کردار ادا کر رہے تھے، انہی حرکتوں کی وجہ سے تباہ ہوچکے ہیں۔ جیسا کہ ڈاڈیکس، لبرٹی ملز، گلوب ٹیکسٹائل، سیلی ٹیکسٹائلز، العابد ملز، سرل پاکستان اور سنگر پاکستان۔ فلپس پاکستان کا 1998ء میں حصص واپس لینا بھی انہی وجوہات کی بنیاد پر تھا۔

asim-hussain-shahid-hayat

گروپ کے پے رول پر متعدد حکومتی و اہم شخصیات ہیں جن کا اثر و رسوخ مالیاتی جرائم کے ارتکاب میں استعمال کیا جاتا ہے۔ جے ایس گروپ کی ان سرگرمیوں کو مکمل طور پر سیاسی حکومتوں کی پشت پناہی حاصل رہتی ہیں۔ یہ عمل نہایت منظم طریقے سے جاری ہے۔ مثال کے طور پر وزیر اعظم نوازشریف کے سیکریٹری فواد حسن فواد بھی جہانگیر صدیقی کے ساتھ وابستہ رہے ہیں اور اُنہیں ایک پشت پناہ کے طور پر لیا جاتا ہے۔ وہ اسپرنٹ انرجی پرائیوٹ لمیٹڈ کے معاملے میں بھی شامل تھے۔ جس نے ایس این جی پی ایل کی جعلی دستاویزات کے ذریعے صوبہ پنجاب میں سی این جی اسٹیشنوں کو غیر قانونی طور پر دوسرے مقامات پر منتقل کیا۔ مگر یہ جہانگیر صدیقی کی پھیلائی ہوئی بساط کی ایک بہت چھوٹی سی کہانی کا نہایت معمولی کردار ہے۔ بات اس سے کہیں آگے جاتی ہے۔ جس کی تفصیلات اپنے مقام پر آئیں گی۔ الغرض موجودہ اور ریٹائرڈ پولیس افسران اور ایف بی آئی حکام بھی گروپ کے پے رول پر ہیں جیسا کہ عابد حسین (ای ڈی، ایس ای سی پی)، شاہد حیات (ڈائریکٹر ایف آئی اے)، سعود احمد مرزا (سابق ڈی جی ایف آئی اے، اِس وقت جے ایس سی ایل کے ڈائریکٹر کے عہدے پر فائز)، جی ایم ملکانی (سابق پولیس چیف جو جے ایس گروپ آف کمپنیز کے بورڈ میں شامل تھے اور آزگرد نائن فراڈ میں ایس ای سی پی تحقیقاتی رپورٹ میں نامزد)، فہد ہارون (پی آر)، کمال افسر (سابق بیوروکریٹ، جو جے ایس اور خسرو خواجہ کے ساتھ پی این ایس سی بورڈ میں خدمات انجام دے چکے ہیں اور اس وقت مختلف اداروں میں جے ایس کی نمائندگی کر رہے ہیں)، عبد الحمید ڈاگیا (وہ مختلف اداروں میں جے ایس گروپ کی نمائندگی کرتے ہیں اور ان پر آزگرد نائن لمیٹڈ حصص کی تجارت کے فراڈ کا الزام ہے لیکن ایس ای سی پی نے انہیں شیئر رجسٹرار سروسز چلانے کی اجازت دے رکھی ہے یعنی مفاد عامہ کو خطرے میں ڈال رکھا ہے )، عدنان آفریدی، خالد مرزا (انہوں نے چیئرمین ایس ای سی پی کی حیثیت سے اپنے عہدے کے آخری دن جے ایس گروپ کو غیر قانونی طور پر اسٹاک ایکسچینج لائسنس جاری کیا)، نجم علی (جے ایس انوسٹمنٹس کے سی ای او کی حیثیت سے وہ ایس ای سی پی کے فوجداری معاملے میں آزگرد نائن فراڈ اور دیگر مختلف جرائم کے ملزم ہیں)، حبیب الرحمٰن (جے ایس گروپ کے نمائندہ، اس سے پہلے جے ایس ابامکو، مہوش جہانگیر صدیقی فاؤنڈیشن کے لیے خدمات انجام دے چکے ہیں)، شمیم احمد خان (مختلف اداروں میں جے ایس گروپ کے نمائندہ)، جاوید مسعود (سابق سی ای او پاکرا ریٹنگ کمپنی)، عمارن شیخ (پی آر او، نائب صدر جے ایس گروپ)، زاہد اللہ (جے ایس بینک کے ملازم) ریٹائرڈ جسٹس محبوب احمد، طاہر محمود، کمشنر ایس ای سی پی، عاکف سعید کمشنر ایس ای سی پی، خواجہ خسرو (پی این ایس سی اور کے ای ایس سی کے بورڈز میں جہانگیر صدیقی کے ساتھ خدمات انجام دینے والے) ان میں سے چند ہیں۔ ان تمام افراد کے بارے میں ایک سلسلہ وار رپورٹ کے تحت تمام تفصیلات اور تعلقات کے بل بوتے پر اداروں کےاستحصال اور لوٹ مار کے عمل میں ایک معاونت کی مکروہ تال میل کو یہاں بے نقاب کرنا مقصود ہے۔

ایک آزاد تحقیقاتی کمیشن کے ذریعےجہانگیر صدیقی کے تمام معاملات کی چھان بین کی ضرورت ہے۔ تاکہ ان حساس نوعیت کے معاملات میں پاکستان کے کاروباری اداروں کے ساتھ رچائی گئی سازشیں بے نقاب ہو

جے ایس گروپ بینک، این بی ایف سی (میوچوئل فنڈز مینجمنٹ)، بروکریج ہاؤس، این جی او اور پرائیوٹ کمپنیوں کا لائسنس رکھتا ہے اور وہ جرائم کے ارتکاب کے لیے اپنے پورے مالیاتی رابطوں اور وسیع سرمائے کو استعمال کرتا ہے۔ گروپ مختلف فراڈز میں ملوث رہا ہے، جیسا کہ 2008ء میں جے ایس گروپ کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں جوڑ توڑ کے ذریعے ملک کی معیشت کو نقصان پہنچانے کی بھیانک سازش، جس میں جے ایس سی ایل کے جعلی حصص کا اجرا بھی شامل ہے، سرکاری اداروں کو نقصان، جے ایس بینک کے لیے کم از کم سرمائے کی اسٹیٹ بینک کی شرائط کو جھانسا دینا، مارکیٹ کے نرخوں سے کہیں زیادہ پر سرکاری اداروں جیسا کہ نیشنل بینک کف ایگری ٹیک ایف سیز کا اجرا، پی آئی سی ٹی کمپنی شیئرز میں خفیہ تجارت، علی جہانگیر صدیقی کو 4.3 ملین ڈالرز کے جعلی بونس کی ادائیگی جس نے چھوٹے حصص یافتگان کو نقصان پہنچایا، آزگرد نائن کمپنی کے حصص میں مارکیٹ جوڑ توڑ، آئی سی آئی پاکستان کے حصص میں سازباز، ایف بی آر کے سامنے غلط بیانی سے این جی او کا لائسنس حاصل کرنا، اسپرنٹ انرجی معاملے میں سی این جی اسٹیشنوں کے لائسنس فراڈ سے حاصل کرنا (جو بدنام زمانہ اوگرا معاملے سے متعلق ہے)، ای ایف یو لائف انشورنس اور ای ایف یو جنرل انشورنس کمپنی کے حصص میں سازباز، بے ایمانی اور فراڈ کے ذریعے عوامی اداروں کو میوچل فنڈ یونٹوں کی فروخت وغیرہ۔ ان میں سے متعدد مقدمات بھی درج ہو چکے ہیں اور تفتیشی اداروں کے پاس کئی معاملات کی تحقیقات موجود ہیں جیسا کہ قومی احتساب بیورو (نیب)، سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی)، وغیرہ کے روبرو۔ مگر جہانگیر صدیقی اپنے مالیاتی جرائم کے باوجود غیر قانونی استثنا حاصل کرنے کے لیے موجودہ اور ریٹائر بیورو کریٹس، حکومتی افسران اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کی خدمات حاصل کر رہے ہیں اور اپنے انہی تعلقات کی وجہ سے اب تک دندناتے پھر رہے ہیں۔ اس میں تازہ ترین اضافہ میرشکیل الرحمان کی صورت میں اس طرح ہوا کہ وہ اب اُن کے سمدھی بن چکے ہیں۔ جس کے باعث جنگ گروپ جو ایک زبردست ساکھ کا حامل پاکستان کا سب سے بڑا ذرائع ابلاغ کا گروپ تھا، صرف جہانگیرصدیقی کی لامحدود حرص اور غیر قانونی کاروباری پھیلاؤ کے تحفظ کا آلہ کار بنتا جار ہا ہے۔

جیسا کہ پہلے بتایا گیا کہ ملک کی معیشت کو نقصان پہنچانے کے لیے جے ایس گروپ نے ایک منصوبہ بنایا تھا، جس میں 2006ء سے 2008ء کے دوران گروپ کے اداروں کی حصص کی قیمتیں بڑھائی گئیں تاکہ جے ایس سی ایل کی خالص اثاثہ جات کی ویلیو کے بارے میں مصنوعی تاثر قائم ہو اور پھر حصص کو گرا کر جعلی قیمتوں سے بڑے پیمانے پر منافع لوٹا جا سکے۔ مختلف ماتحت اداروں اور ایسوسی ایٹس کے حصص کی قیمتیں ایسی ہی سازشوں کے ذریعے بڑھائی گئیں تاکہ مصنوعی تاثر دیا جا سکے۔ اس کے بعد غیر ملکی سرمایہ کاروں کو حقوق کے ساتھ ساتھ حصص بھی جاری کیے اور ان سرمایہ کاروں کو بڑا نقصان پہنچایا۔ ایس ای سی پی نے ڈاکٹر عاصم حسین اورسابق وزیر خزانہ نوید قمر کے اثر و رسوخ تلے دب کے انہیں غیر قانونی استثنا دیے۔
Naveed-Qamar
ایس ای سی پی نے جے ایس گروپ کے ان اقدامات کے خلاف فوجداری مقدمہ دائر کیا تھا، جس میں منی لانڈرنگ اور کالعدم گروہوں کی مبینہ سرمایہ کاری بھی پائی گئی۔ رپورٹ نے خانانی اینڈ کالیا منی ایکسچینج کے ساتھ متعدد ملزمان کے روابط کا بھی انکشاف کیا۔ ان روابط کی چھان بین ایسے حالات میں اور زیادہ ضروری ہو جاتی ہے جبکہ امریکا نے خود خانانی اینڈ کالیا پر پابندی عائد کردی ہے۔

جہانگیر صدیقی کے تعلقات میں تازہ ترین اضافہ میرشکیل الرحمان کی صورت میں ہوا، جو اب اُن کے سمدھی بن چکے ہیں۔ جس کے باعث جنگ گروپ جو ایک زبردست ساکھ کا حامل پاکستان کا سب سے بڑا ذرائع ابلاغ کا گروپ تھا، صرف جہانگیرصدیقی کی لامحدود حرص اور غیر قانونی کاروباری پھیلاؤ کے تحفظ کا آلہ کار بنتا جار ہا ہے

مندرجہ بالا تناظر میں ایک آزاد تحقیقاتی کمیشن کے ذریعےجہانگیر صدیقی کے تمام معاملات کی چھان بین کی ضرورت ہے۔ تاکہ ان حساس نوعیت کے معاملات میں پاکستان کے کاروباری اداروں کے ساتھ رچائی گئی سازشیں بے نقاب ہو اورقواعد کے برخلاف فائدہ سمیٹنے والے داخلِ زنداں ہو سکیں۔ تمام اداروں اور ان کے باہمی گٹھ جوڑ کی ایک آزاد تحقیق ظاہر کرے گی کہ یہ منصوبے کیسے بنائے گئے اور ہرشد مہتا قسم کی اسکیم کے ذریعے حصص کو اوپر اور نیچے کرکے ملک کے بازار حصص اور پوری معیشت کو کتنا نقصان پہنچایا گیا، خاص طور ایسے وقت جب وہ بلند پروازی کے لیے تیارتھی۔

جامع تحقیقات کے لیے جے ایس سی ایل کا تجارتی ڈیٹا برائے سال 2007ء اور 2008ء کراچی اسٹاک ایکسچینج سے حاصل کرنا چاہیے۔ اس ڈیٹا کی جانچ کیپٹل مارکیٹوں، سرمایہ کاروں، سرکاری اداروں اور قومی معیشت کو پہنچنے والے زبردست نقصان کا حقیقی اندازہ فراہم کرے گی؛ ساتھ ہی یہ بھی کہ روپیہ دباؤ میں کیوں آیا اور نتیجتاً غیر ملکی ذخائر اور ساتھ ساتھ ادائیگی کا توازن کیسے متاثر ہوا؟جے ایس سی ایل تجارتی ڈیٹا قومی سرمایہ مارکیٹ اور معیشت کو پہنچنے والے نقصان کا حقیقی فائدہ اٹھانے والوں کو بھی بے نقاب کرے گا۔ اس پورے کھیل میں کسی غیر ملکی ہاتھ کو بھی خارج از امکان قرار نہیں دیا جاسکتا کیونکہ پاکستان اسٹاک مارکیٹ کے نقصان کا اصل فائدہ ہمارے پڑوسی اٹھا سکتے ہیں۔ جن کے حق میں “امن کی آشا” جیسی مہمیں چل چکی ہیں اور “دوستی کرکے جیو” جیسی وطن دشمن نفسیات پائی جاتی ہے۔ واضح رہے کہ حصص کی قیمت میں جوڑ توڑ کرنا سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج آرڈیننس 1969ء کے سیکشن 17 کے تحت ایک مجرمانہ فعل ہے اور اس کی سزا قید اور بھاری مالی ہرجانے بھی ہو سکتی ہے۔ یہ معاملہ اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010ء میں بھی شمار ہو سکتا ہے۔ (جاری ہے)

(یہ تحریر دراصل جہانگیر صدیقی کے پورے کاروبار گروپ اور اُن کے “گاڈ فادر” بننے کی لامحدود حرص وہوس کی طرف توجہ دلانے کے لئے محض ایک تمہید کا درجہ رکھتی ہے۔ اس میں اُٹھائے گئے مختلف پہلووؤں پر تفصیلی روشنی اگلی تحریروں میں ڈالی جائیگی)


متعلقہ خبریں


سعودی عرب کا ایران پرجوہری پروگرام سے متعلق دھوکا دہی سے کام لینے کا الزام وجود - بدھ 13 نومبر 2019

سعودی عرب کی وزیرخارجہ نے ایران پر اپنے جوہری پروگرام کے بارے میں ’’دھوکا دہی اور ابہام‘‘ سے کام لینے کا الزام عاید کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ جوہری توانائی کے عالمی ادارے (آئی اے ای اے) کو اپنی حساس جوہری سرگرمیوں سے متعلق معلومات فراہم کرنے میں تاخیری حربے استعمال کررہا ہے۔سعودی پریس ایجنسی کے مطابق سعودی وزیرمملکت برائے خارجہ عادل الجبیر نے ایران پر زور دیا کہ وہ جوہری توانائی کے عالمی ادارے اور اس کے معائنہ کاروں کے ساتھ مکمل تعاون کرے۔

سعودی عرب کا ایران پرجوہری پروگرام سے متعلق دھوکا دہی سے کام لینے کا الزام

میری شادی کے لیے کوئی سستا شادی ہال تلاش کریں،سعودی بیٹی کا والد کوپیغام وجود - بدھ 13 نومبر 2019

سعودی عرب کے دمام میں ایک دو شیزہ کا اپنے والد کے نام مکتوب سوشل میڈیا پروائرل ہونے کے بعد اس پر تحائف کی بارش کردی۔عرب ٹی وی کے مطابق سعودی عرب کے شہردمام سے تعلق رکھنے والی ایک لڑکی نے اپنے والد کو شادی سے چند دن قبل ایک مکتوب لکھا جس میں ان سے کہا کہ اس کی شادی کے لیے کوئی سستا شادی ہال تلاش کریں۔ اس کا حق مہر25 ہزار ریال سے زیادہ نہ ہو اور اس کی شادی پراٹھنے والے اخراجات بھی اس رقم سے زیادہ نہ ہوں۔سعودی دو شیزہ کا والد کو پیغام سوشل میڈیا پروائرل ہوتے ہی صارفین کی طرف سے ...

میری شادی کے لیے کوئی سستا شادی ہال تلاش کریں،سعودی بیٹی کا والد کوپیغام

لیبیا کے جسمانی طور پرآپس میں جڑے دو بچوں کا سعودی عرب میں آپریشن وجود - بدھ 13 نومبر 2019

لیبیا سے تعلق رکھنے والے دو شیرخوار بچے جن کے دھڑ ایک دوسرے کے ساتھ جْڑے ہوئے ہیں کوآپریشن کے ذریعے الگ کرنے کے لیے سعودی عرب لایا گیا ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق سعودی عرب کے ماہر سرجن ڈاکٹر عبداللہ بن عبدالعزیز الربیعہ اور ان کی ٹیم نے بچوں کے معائنے کی تکمیل کے بعد ان کی سرجری کا فیصلہ کیا ہے۔ آپس میں جڑے بچوں کے نام احمد اور محمد رکھے گئے ہیں۔ ان کی سرجری کا عمل کل جمعرات کو شاہ عبدالعزیز میڈیکل سٹی کے شاہ عبداللہ اسپتال میں کیا جائے گا۔سرجری ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر عبداللہ الربی...

لیبیا کے جسمانی طور پرآپس میں جڑے دو بچوں کا سعودی عرب میں آپریشن

ٹوئٹر نے حسن نصراللہ کے فرزند کا اکائونٹ بھی بلاک کردیا وجود - بدھ 13 نومبر 2019

مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ ٹویٹر نے لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے سربراہ حسن نصراللہ کے بیٹے جواد نصراللہ کا اکائونٹ بھی بلاک کردیاہے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق ٹویٹر کی طرف سے یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب گذشتہ منگل کوامریکا نے جواد نصراللہ کو بلیک لسٹ کردیا تھا۔ٹویٹر کا دعویٰء ہے کہ جواد نصراللہ اپنے سخت موقف اور متنازع فتووں کی تشہیر کے لیے اس پلیٹ فارم کو استعمال کرتا تھا جو کہ ٹویٹر کی پالیسی کے خلاف ہے۔ کمپنی کا کہناتھا کہ جواد نصراللہ کے خلاف بار بار شکایات ا...

ٹوئٹر نے حسن نصراللہ کے فرزند کا اکائونٹ بھی بلاک کردیا

سعودی عرب میں دہشت گردی کے 38 ملزمان کو قید اور ملک بدری کی سزا وجود - بدھ 13 نومبر 2019

سعودی عرب کی ایک خصوصی فوجداری عدالت نے دہشت گردی اور متعدد الزامات میں قصوروار ثابت ہونے کے بعد کل 41 ملزمان میں سے 38 کو قید اور ملک بدری کی سزائیں سنادیں۔میڈیارپورٹس کیے مطابق ان ملزمان پر منہج کتاب و سنت کے برخلاف انتہا پسندانہ نظریات اختیار کرنے ،دہشت گردی کی کارروائیوں کے لیے مالی اعانت فراہم کرنے ، دہشت گرد تنظیم قائم کرنے، لوگوں کو اس میں بھرتی کرنے، کچھ کو ایک انتہا پسند تنظیم کے ہاتھ پر بیعت کرنے، ملک میں بد امنی پھیلانے اور ملک کے نظم ونسق میں خلل پیدا کرنے کے لیے ...

سعودی عرب میں دہشت گردی کے 38 ملزمان کو قید اور ملک بدری کی سزا

مصنوعی گردوں کے ذریعے ڈائیلاسز کے عمل میں کامیاب پیشرفت وجود - منگل 12 نومبر 2019

گردوں کے امراض کے دوران ڈائیلاسز کرانا مریض کے لیے زیادہ تکلیف دہ ثابت ہوتا ہے تاہم لگتا ہے کہ مستقبل میں اس سے نجات مل جائے گی۔میڈیارپورٹس کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا تھا کہ آٹومیٹڈ وئیرایبل مصنوعی گردے سے کڈنی فیلیئر کے مریضوں کے خون میں سے زہریلے مواد کو موثر طریقے سے نکالنے میں مدد مل سکے گی۔سائنسدانوں کی جانب سے اس مصنوعی گردے والی ڈیوائس کی ڈائیلاسز کے لیے آزمائش کی جارہی ہے جس سے تھراپی کے کئی گھنٹوں اور بڑی مشینوں کے استعمال سے نجات مل جائے گی۔اس ٹیکنالوجی میں ڈائیلاس...

مصنوعی گردوں کے ذریعے ڈائیلاسز کے عمل میں کامیاب پیشرفت

امریکا، تبت میں مداخلت کیلئے اقوام متحدہ کو استعمال کررہا ہے، چین وجود - منگل 12 نومبر 2019

چین نے تبت کے دلائی لامہ کے جانشین کے انتخاب کے حوالے سے واشنگٹن کی مبینہ سرگرمیوں پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا، تبت میں مداخلت کے لیے اقوام متحدہ کو استعمال کر رہا ہے۔غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق امریکا کے سفیر برائے مذہبی آزادی سیم براون بیک نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ امریکا چاہتا ہے کہ تبت کے روحانی رہنما کی جانشینی کے معاملے کو اقوام متحدہ دیکھے۔ان کا کہنا تھا کہ دلائی لامہ کے جانشین کا انتخاب تبت کے بدھ مذہب کے ماننے والوں سے متعلق ہے اور اس پر چینی حکومت کا کوئی ت...

امریکا، تبت میں مداخلت کیلئے اقوام متحدہ کو استعمال کررہا ہے، چین

روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی پر میانمار کے خلاف عالمی عدالت میں کیس وجود - منگل 12 نومبر 2019

مغربی افریقی ملک گیمبیا کی حکومت نے جنوبی ایشیائی ملک میانمار کے خلاف روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی پر اقوام متحدہ کی عدالت میں قانونی کارروائی کے لیے درخواست دائر کردی۔ یہ مقدمہ 57 ملکی اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی)کی جانب سے میانمار کے خلاف عالمی عدالت میں لایا گیا ہے۔غیرملکی خبررساں دارے کے مطابق قانونی درخواست میں کہا گیا کہ میانمار نے اقوام متحدہ کے نسل کشی کنونشن 1948 کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ریاست رخائن میں مسلم اقلیت روہنگیا کے خلاف فوجی کارروائی کی۔گیمبیا کے وزیر انصاف...

روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی پر میانمار کے خلاف عالمی عدالت میں کیس

21ویں صدی میں جنگی جرائم کی گنجائش نہیں ، امریکی ذمے دار کا ایردوآن کو انتباہ وجود - منگل 12 نومبر 2019

امریکی قومی سلامتی کے مشیر رابرٹ اوبرائن نے ترکی پر پابندیاں عائد کرنے کی دھمکی دیتے ہوئے ترکی کو خبردار کیا ہے کہ وہ شامی کْردوں کے خلاف کسی بھی قسم کے جنگی جرائم یا نسلی تطہیر سے باز رہے۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ بیان ایسے وقت میں سامنے آیا جب ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن بدھ کے روز وائٹ ہاؤس میں اجلاس میں شرکت کے لیے واشنگٹن کے دورے کی تیاری میں مصروف ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق اوبرائن کا کہنا تھا کہ وہ شمال مشرقی شام میں ترکی کے حملے کے بعد وہاں ممکنہ جنگی جرائم ...

21ویں صدی میں جنگی جرائم کی گنجائش نہیں ، امریکی ذمے دار کا ایردوآن کو انتباہ

مصر کی مشہور زمانہ نہر سویز کی کھدائی کے افتتاح کے 150سال مکمل وجود - منگل 12 نومبر 2019

آئندہ اتوار کو مصر کی مشہور زمانہ نہر سویزکی کھدائی کے افتتاح کو 150 سال ہوجائیں گے۔ نہر سویز کی کھدائی کے بارے میں بہت سی زبانوں میں کافی مواد موجود ہے۔مصری میڈیا نے بتایاکہ مستند معلومات کے مطابق اس نہر کی کھدائی میں ایک ملین مصریوں نے حصہ لیا جن میں ایک لاکھ 20 ہزار مزدورمختلف حادثات میں کھدائی کے دوران لقمہ اجل بن گئے۔ اس نہر کی کھدائی کا سلسلہ 10 سال تک دن رات جاری رہا۔ طویل اور مشقت سے بھرپور کھدائی کے بعد 1993 کلو میٹر طویل نہر کھودی گئی۔ اس کی کم سے کم چوڑائی 280 میٹر...

مصر کی مشہور زمانہ نہر سویز کی کھدائی کے افتتاح کے 150سال مکمل

روزانہ 7 سے 8 منٹ کی دوڑ قبل از وقت موت سے بچا سکتی ہے،نئی تحقیق وجود - پیر 11 نومبر 2019

آسٹریلیا کی مشہور وکٹوریہ یونیورسٹی نے نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ ہفتے میں ایک مرتبہ 50 منٹ کی دوڑ انسان کو قبل از وقت موت سے بچا سکتی ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے رنرز ورلڈ کے مطابق ملبورن کی وکٹوریا یونیورسٹی کی تحقیق میں 14 تحقیق کی معلومات کو اکٹھا کیا گیا جس میں 23 لاکھ سے زائد لوگ شامل تھے۔ ماہرین نے نتیجہ اخذ کیا کہ دوڑ صحت کیلئے بے حد مفید ہے اور یہ انسان کے قبل از وقت مرنے کے امکانات یا خطرات کو 27 فیصد تک کم کر سکتی ہے۔خبر رساں ادارے کے مطابق روزانہ 7 سے 8 منٹ کی دوڑ ...

روزانہ 7 سے 8 منٹ کی دوڑ قبل از وقت موت سے بچا سکتی ہے،نئی تحقیق

فیس بک اورٹوئٹرصہیونیوں کے آلہ کار بن گئے،حماس رہ نما وجود - پیر 11 نومبر 2019

اسلامی تحریک مزاحمت حماس نے فلسطینی مزاحمت کے حامی سوشل صحافت کی بندش پر کڑی نکتہ چینی کرتے ہوئے سماجی رابطوں کی ویب سائٹس فیس بک اور ٹویٹرکو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق حماس کے بیرون ملک امور کے انچار محمد نزال نے ایک بیان میں کہا کہ فیس بک اورٹویٹرصہیونی ریاست کی مسلسل طرف داری کرکے اپنی غیر جانب ادارانہ ساکھ کھو چکے ہیں۔ ان دونوں ویب سائٹس کی طرف سے صہیونی ریاست کے خاکوں میں رنگ بھرنے کی کوشش کی جا رہی ہے اوردونوں سوشل نیٹ ورکنگ پلیٹ فارم غاصب ...

فیس بک اورٹوئٹرصہیونیوں کے آلہ کار بن گئے،حماس رہ نما

مضامین
چلغوز۔یات (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 13 نومبر 2019
چلغوز۔یات (علی عمران جونیئر)

پا شا احمد گل شہید اسلامی مزدور تحریک کا سچا سپاہی
(عطا محمد تبسم)
وجود جمعرات 07 نومبر 2019
پا شا احمد گل شہید اسلامی مزدور تحریک کا سچا سپاہی <br>(عطا محمد تبسم)

دھرنے کی آکاس بیل۔!
(راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود جمعرات 07 نومبر 2019
دھرنے کی آکاس بیل۔!  <br>(راؤ محمد شاہد اقبال)

سیاسی چور۔(علی عمران جونیئر) وجود جمعرات 07 نومبر 2019
سیاسی چور۔(علی عمران جونیئر)

مولانا فضل الرحمن اور مسئلہ کشمیر
(حدِ ادب...انوار حسین حقی)
وجود پیر 04 نومبر 2019
مولانا فضل الرحمن  اور مسئلہ کشمیر  <BR>(حدِ ادب...انوار حسین حقی)

جسٹن ٹروڈو کی جیت یا مودی سرکارکی ہار؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 04 نومبر 2019
جسٹن ٹروڈو کی جیت یا مودی سرکارکی ہار؟ <BR>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

طالبان تحریک اور حکومت
(جلال نُورزئی) قسط نمبر(7)
وجود هفته 02 نومبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت <br> (جلال نُورزئی) قسط نمبر(7)

سخت فیصلے کا سیزن۔۔
(علی عمران جونیئر)
وجود هفته 02 نومبر 2019
سخت فیصلے کا سیزن۔۔ <br> (علی عمران جونیئر)

سیاسی اختلاف اور شہریت کی منسوخی
(جلال نُورزئی)
وجود بدھ 30 اکتوبر 2019
سیاسی اختلاف اور شہریت کی منسوخی<br>(جلال نُورزئی)

آٹھ آنے کا بچہ۔۔
(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 30 اکتوبر 2019
آٹھ آنے کا بچہ۔۔<br> (علی عمران جونیئر)

ڈکیتی!!!... (شعیب واجد) وجود پیر 28 اکتوبر 2019
ڈکیتی!!!... (شعیب واجد)

’’کُرد کارڈ ‘‘عالمی طاقتوں کے ہاتھ سے پھسل رہا ہے؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 28 اکتوبر 2019
’’کُرد کارڈ ‘‘عالمی طاقتوں کے ہاتھ سے پھسل رہا ہے؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

اشتہار