وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

لیبیا پر حملہ کیوں کیا گیا؟ خفیہ ای میلز میں حیران کن انکشاف

اتوار 24 جنوری 2016 لیبیا پر حملہ کیوں کیا گیا؟ خفیہ ای میلز میں حیران کن انکشاف

allied-attack-on-civilians-libya-2011

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 1973 کے تحت لیبیا میں ہونے والی بغاوت کے نتیجے میں شہریوں کی حفاظت یقینی بنانے کے لیے ‘نو فلائی زون’ تخلیق کیا گیا تھا۔ اس پورے معاملے میں فرانس پیش پیش تھا لیکن سابق امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کی منظر عام پر آنے والی 3 ہزار ای میلز سے ایسے ٹھوس شواہد سامنے آتے ہیں جو یہ بتانے کے لیے کافی ہیں کہ مغربی ممالک نیٹو کا استعمال کرتے ہوئے لیبیا کے رہنما معمر قذافی کا تختہ الٹنا چاہ رہے تھے، عوام کی حفاظت کے لیے نہیں بلکہ اس لیے کیونکہ انہیں قذافی کے ایک افریقی کرنسی کے اجرا کے منصوبوں کا علم ہوگیا تھا، جو مغربی ممالک کے مرکزی بینکاری نظام کی اجارہ داری کا مقابلہ کرتا۔

ہلیری کلنٹن کی ای میلز ظاہر کرتی ہیں کہ فرانس کی قیادت میں لیبیا کے خلاف شروع کی گئی نیٹو فوجی مہم کا ایک مقصد تو لیبیا میں تیل کی پیداوار میں بڑا حصہ حاصل کرنا تھا اور دوسرا فرانس کے زیر اثر افریقی علاقوں میں فرانسیسی اثر و رسوخ کم کرنے کی قذافی کی کوششوں کا خاتمہ بھی تھا۔

اپریل 2011ء میں ایک ای میل، جو وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کو غیر سرکاری مشیر اور طویل عرصے سے ان کے محرم راز، سڈن بلومنتھیل نے بھیجی تھی، مغرب کی غارت گرانہ سوچ کی حقیقی عکاسی کرتی ہے۔ اس ای میل کا موصوع “فرانسیسی گاہک اور قذافی کا سونا” تھا۔ فارن پالیسی جرنل بتاتا ہے کہ:

یہ ای میل نشاندہی کرتی ہے کہ فرانس کے صدر نکولا سرکوزی لیبیا پر حملہ کرتے ہوئے پانچ مقاصد ہیں: لیبیا کے تیل پر قبضہ کرنا، خطے میں فرانسیسی اثر و رسوخ کو یقینی بنانا، مقامی سطح پر یعنی فرانس میں اپنی ساکھ بہتر بنانا، فرانس کی فوجی طاقت کا اظہار کرنا اور فرانسیسی بولنے والے افریقی علاقوں کو قذافی کے اثر و رسوخ سے بچانا۔

اس ای میل کا سب سے حیرت انگیز حصہ وہ ہے جس میں اُس بڑے خطرے کا خاکہ کھینچا گیا ہے جو قذافی کے سونے اور چاندی کے ذخائر سے درپیش ہے۔ 143 ٹن سونا اور لگ بھگ اتنی ہی چاندی، جو فرانسیسی فرانک کو افریقہ کی اہم ترین کرنسی کے طور پر پھیلنے سے روک سکتے ہیں۔

ای میل واضح کرتی ہے کہ انٹیلی جنس ذرائع نے اشارہ دیا تھا کہ لیبیا پر فرانس نے شدت اور سرعت کے ساتھ حملہ کیا وہ ظاہر کرتا ہے کہ یہ اپنی بڑی طاقت کے اظہار کے لیے کیا گیا تھا، جس میں جس میں سامراجی کامیابی کے لیے نیٹو کو ہتھیار کے طور پر استعمال کیا گیا، یہ ہرگز انسانوں کو بچانے کے لیے کیا گیا حملہ نہیں تھا جو عام طور پر عوام سمجھتے رہے۔

ای میل کے مطابق یہ سونا موجودہ بغاوت سے پہلے جمع کیا گیا تھا اور اسے ایک “پین-افریقن کرنسی” کے قیام میں استعمال کیا جانا تھا جو لیبیا کے طلائی دینار کی بنیاد پر ہوتی۔ یہ منصوبہ فرانسیسی بولنے والے افریقی ممالک کو فرانسیسی فرانک کا ایک متبادل فراہم کرنے کی حیثیت سے تیار کیا گیا تھا۔

باوثوق ذرائع کے مطابق اس سونے اور چاندی کی مالیت 7 ارب ڈالرز سے زیادہ تھی۔ فرانس کے انٹیلی جنس افسران نے اس منصوبے کا سراغ موجودہ بغاوت کے آغاز پر ہی پا لیا تھا اور یہی اہم عوامل میں سے ایک تھا جس نے صدر نکولا سرکوزی کو لیبیا پر حملے کا فیصلے لینے پر آمادہ کیا۔

یہ ای میل محض ایک ہلکی سی جھلک فراہم کرتی ہے کہ اکثر و بیشتر خارجہ پالیسی کس طرح کام کرتی ہے۔ ذرائع ابلاغ میں پیش کیا گیا کہ مغرب کی مدد سے لیبیا میں کی گئی فوجی مداخلت انسانی جانوں کو بچانے کے لیے ضروری ہے، جبکہ حقیقی محرک یہ تھا کہ قذافی ایک براعظمی کرنسی کے ذریعے خطے کی اقتصادی آزادی کا منصوبہ بنا رہے تھے، جو خطے میں فرانس کے اثر و رسوخ اور طاقت کو کم کر دیتی۔

یہ ثبوت ظاہر کرتا ہے کہ فرانس کے انٹیلی جنس حکام کو علم تھا کہ وہ مغرب کے مرکزی بینکاری نظام کا مقابلہ کرنے والی ایک کرنسی تخلیق کرنے جا رہے ہیں، یہیں سے معاملے کو فوجی انداز میں حل کرنے کا آغاز ہوا اور بالآخر نیٹو اتحاد شامل ہوگیا۔


متعلقہ خبریں


انسانی جسم ماضی میں ہونے والے کورونا وائرسز کے حملے کو یادرکھتا ہے ،تحقیق وجود - پیر 25 جنوری 2021

ماضی میں کسی بھی قسم کے کورونا وائرس کا سامنا مدافعتی نظام کو نئے کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ 19 سے لڑنے کے لیے تیار کرتا ہے ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ بات ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی۔ہوسکتا ہے کہ آپ کو علم نہ ہو مگر متعدد اقسام کے کورونا وائرسز دنیا میں گردش کررہے ہیں، جن میں سے بیشتر عام نزلہ زکام جیسی بیماریوں کا باعث بنتے ہیں۔تاہم 2012 میں مرس اور 2003 میں سارس کوو 1 میں جان لیوا کورونا وائرسز سامنے آئے تھے ۔اس نئی تحقیق میں جانچ پڑتال کی گئی کہ کورو...

انسانی جسم ماضی میں ہونے والے کورونا وائرسز کے حملے کو یادرکھتا ہے ،تحقیق

دنیا بھر کے 63کروڑ خواتین اور بچے جنگی تنازعات کا شکار وجود - پیر 25 جنوری 2021

ماہرین اور تفتیش کاروں پر مشتمل دی لینسیٹ نے تنازع کا شکار علاقوں میں عالمی برادری کی خواتین اور بچوں کی صحت کو ترجیح دینے میں ناکامی پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاہے کہ عدم تشدد کے سبب مرنے کا خطرہ زیادہ شدت اور دائمی تنازعات کی قربت کے ساتھ کافی حد تک بڑھ جاتا ہے ، میڈیارپورٹس کے مطابق دی لینیسٹ ک ی رپورٹ میں کہاگیاکہ انسانی حقوق کے اداروں اور امداد دہندگان سے سیاسی اور سیکیورٹی چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک بین الاقوامی عہد کا مطالبہ کیا گیا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ اس بات پر ب...

دنیا بھر کے 63کروڑ خواتین اور بچے جنگی تنازعات کا شکار

بابری مسجد کی جگہ تعمیر ہونے والی مسجد احمد اللہ شاہ کے نام سے منسوب وجود - پیر 25 جنوری 2021

ایودھیا میں بابری مسجد کی جگہ تعمیر ہونے والی مسجد احمد اللہ شاہ کے نام منسوب ہوگی۔میڈیارپورٹس کے مطابق انڈو اسلامک کلچرل فاونڈیشن نے بتایاکہ احمد اللہ شاہ 1857 کی جنگ آزادی کے جنگجو تھے ۔آئی سی ایف کے سیکریٹری اطہر حسین کے مطابق مسجد کے نام کے حوالے سے بیشمار تجاویز موصول ہوئیں تاہم اس نتیجے پر پہنچے کہ مسجد کو احمد اللہ شاہ کے نام منسوب کیا جائے گا۔احمد اللہ شاہ جنگ آزادی ہند 1857 کے ایک رہنما تھے ۔ مولوی احمد اللہ شاہ کو اودھ کے علاقے میں بغاوت کا مرکزی رہنما تصور کیا جاتا...

بابری مسجد کی جگہ تعمیر ہونے والی مسجد احمد اللہ شاہ کے نام سے منسوب

بھارتی یوم جمہوریہ ، مقبوضہ جموں وکشمیر میں کرفیو جیسی سخت پابندیاں نافذ وجود - پیر 25 جنوری 2021

بھار ت کے غیر قانونی زیر قبضہ جموں وکشمیر میں(آج)منگل کو نام نہاد بھارتی یوم جمہوریہ کے موقع پر سیکورٹی کے نام پر کرفیو جیسی سخت پابندیاں نافذ کر دی گئی ہیں جسکی وجہ سے بھارتی ریاستی دہشت گردی کا شکار کشمیریوں کی مشکلات میں کئی گنا اضافہ ہو گیا ہے ۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق بھارتی فورسز نے سرینگر سمیت مقبوضہ وادی کے دیگر مقامات پر چوکیاں قائم کر دی ہیں جہاں مسافروں اور راہگیروںکو روک کر انکی جامہ تلاشی لی جاتی ہے ۔بلند عمارتوں پر ماہر نشانہ باز تعینات کر دیے گئے ہیں جبکہ ڈرون...

بھارتی یوم جمہوریہ ، مقبوضہ جموں وکشمیر میں کرفیو جیسی سخت پابندیاں نافذ

دسمبر میں نجی شعبے کے قرض لینے میں 65 فیصد تک کا اضافہ وجود - اتوار 24 جنوری 2021

دسمبر 2020 میں نجی شعبے کی جانب سے بینکوں سے قرض لینے میں 65 فیصد سے زائد کا اضافہ دیکھا گیا۔مرکزی بینک کے حالیہ اعداد و شمار کے مطابق نجی شعبے نے جولائی سے 8 جنوری 21ـ2020 تک بینکوں سے 215 ارب 50 کروڑ روپے قرض لیا جو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں معاشی سرگرمیاں بڑھنے کے دوران 130 ارب 20 کروڑ روپے تھا۔دسمبر میں قرضوں کے حصول میں تیزی گزشتہ 5 ماہ کی شدید کمی کے مقابلے میں ایک ٹرننگ پوائنٹ کے طور پر سامنے آئی کیونکہ رواں مالی سال کے گزشتہ 5 ماہ میں اس میں مالی سال 20 کے اسی عرصے کے...

دسمبر میں نجی شعبے کے قرض لینے میں 65 فیصد تک کا اضافہ

سوشل میڈیا پرجعلی اکائونٹ ، چیئرمین سینٹ نے پی ٹی اے اور ایف آئی اے حکام کو طلب کرلیا وجود - اتوار 24 جنوری 2021

سوشل میڈیا پرفیک اکائونٹ کے حوالے سے چیئرمین سینٹ نے پی ٹی اے اور ایف آئی اے حکام کو طلب کرلیا ۔ چیئر مین سینٹ نے کہاکہ آزادی رائے کا احترام کرتے ہیں ،فیک اکائونٹ کی آڑ میں کسی کو فیک نام سے کسی کی کردار کشی کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ انہوںنے کہاکہ سوشل میڈیا پر غیر اسلامی مواد نشر کرنا خلاف قانون ہے ، فیک اکاوئنٹ کے حوالے سے بہت جلد قانون سازی کی جائیگی ، انھیں قانون کے دائرے میں لائیں گے ۔

سوشل میڈیا پرجعلی اکائونٹ ، چیئرمین سینٹ نے پی ٹی اے اور ایف آئی اے حکام کو طلب کرلیا

پاکستان ،کورونا وائرس کے کیسز میں ایک بار پھر نمایاں کمی وجود - اتوار 24 جنوری 2021

پاکستان میں کورونا وائرس کی دوسری لہر کے دوران پہلی بار مثبت کیسز کی شرح میں نمایاں کمی سامنے آئی ہے ۔وزارتِ صحت کے حکام کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ 10 نومبر سے قبل کے حالات کی جانب پاکستان واپس آ گیا ہے ، 10 نومبر 2020ء کے بعد کورونا وائرس کے مثبت کیسز کی شرح میں تیزی سے اضافہ ہوا تھا، جن میں اب ایک بار پھر نمایاں کمی دیکھنے میں آ رہی ہے ۔وزارتِ صحت کے حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ 5 تا 8 نومبر 2020ء کورونا وائرس کے مثبت کیسز کی شرح 3 اعشاریہ 9 کے قریب تھی اب پاکستان کورونا وائرس ...

پاکستان ،کورونا وائرس کے کیسز میں ایک بار پھر نمایاں کمی

کووڈ کے ہرتین میں سے ایک مریض میں علامات ظاہر نہیں ہوتیں، تحقیق وجود - اتوار 24 جنوری 2021

کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ 19 کے شکار ایک تہائی افراد میں اس کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں،، مگر اس دوران وہ اسے دیگر افراد تک منتقل کرسکتے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات امریکا میں ہونے والی ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی۔اسکریپپس ریسرچ کی اس تحقیق میں میں 18 لاکھ سے زیادہ افراد ہونے والی 61 طبی تحقیقی رپورٹس کا تجزیہ کرنے کے بعد دریافت کیا گیا کہ کووڈ 19 سے متاثر کم از کم ہر 3 میں سے ایک فرد میں کسی قسم کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔طبی جریدے اینالز آف انٹرنل میڈیسین م...

کووڈ کے ہرتین میں سے ایک مریض میں علامات ظاہر نہیں ہوتیں، تحقیق

امریکا کے عالمی نشریاتی اداروں میں ٹرمپ کے مقرر کردہ اعلی عہدے دار فارغ وجود - اتوار 24 جنوری 2021

امریکا کے وفاقی بجٹ سے چلنے والے تین بین الاقوامی نشریاتی اداروں کے سربراہوں کو صدر جوزف بائیڈن کی انتظامیہ نے ملازمتوں سے فارغ کر دیا ہے ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق امریکا کی ایجنسی برائے گلوبل میڈیا کی قائم مقام سربراہ کیلو شا نے ریڈیو فری یورپ/ریڈیو لبرٹی کے ڈائریکٹر ٹیڈ لی پئین، ریڈیو فری ایشیا کے ڈائریکٹراسٹیفن ییٹس اور مڈل ایسٹ براڈ کاسٹنگ نیٹ ورکس کی ڈائریکٹر وکٹوریا کوٹس کو فارغ خطی دے دی ہے ۔ انھیں سبکدوش صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ نے ایک ماہ قبل ہی ان عہدوں پر م...

امریکا کے عالمی نشریاتی اداروں میں ٹرمپ کے مقرر کردہ اعلی عہدے دار فارغ

برطانیہ سے اسکاٹ لینڈ کی آزادی کیلئے یکطرفہ ریفرنڈم کا اعلان وجود - اتوار 24 جنوری 2021

برطانیہ سے اسکاٹ لینڈ کی آزادی کے لیے ایس این پی نے یکطرفہ طور پر دوسرا ریفرنڈم کرانے کا اعلان کردیا۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق مئی میں اسکاٹ لینڈ میں ہونے والے انتخابات میں اسکاٹش نیشنل پارٹی جیتی تو قانونی ریفرنڈم کرایا جائے گا۔اسکاٹش نیشنل پارٹی کے مطابق گیارہ نکاتی روڈ میپ پیش کیا جائے گا جبکہ برطانوی حکومت کی جانب سے ریفرنڈم روکنے کی کوشش کا مقابلہ کیا جائے گا۔ایس این پی کے رہنما کیتھ براون کا کہنا تھا کہ ٹاسک فورس ریفرنڈم کے لیے حکمت عملی پر عمل پیرا ہوگی۔

برطانیہ سے اسکاٹ لینڈ کی آزادی کیلئے یکطرفہ ریفرنڈم کا اعلان

معروف امریکی ٹاک شو میزبان لیری کنگ 87 سال کی عمر میں چل بسے وجود - اتوار 24 جنوری 2021

امریکا سے تعلق رکھنے والے معروف ٹاک شو میزبان لیری کنگ 87 سال کی عمر میں چل بسے لیری کنگ کے ٹوئٹر اکائونٹ پر اور میڈیا کی جانب سے ایک پیغام میں اس کی تصدیق کی گئی۔امریکی میڈیا کے مطابق اس پیغام میں لکھا گیا کہ ہمارے شریک بانی، میزبان اور دوست لیری کنگ لاس اینجلس کے سیڈرز سینائی میڈیکل سینٹر میں 87 سال کی عمر میں انتقال کرگئے ۔لیری کنگ نے اس چینیل میں 25 سال کے دوران 30 ہزار سے زیادہ انٹرویوز کیے ۔ اپنے کیرئیر کے دوران انہوں نے امریکا کے صدور رچرڈ نکسن سے لے کر ڈونلڈ ٹرمپ کے ا...

معروف امریکی ٹاک شو میزبان لیری کنگ 87 سال کی عمر میں چل بسے

کورونا پر تحقیق ، عرب دنیا میں سعودی عرب پہلے اور دنیا میں 14 ویں نمبر پر وجود - اتوار 24 جنوری 2021

سعودی عرب نے جہاں کرونا کی وبا پر قابو پانے میں کامیابی حاصل کی وہیں اس موذی وبا کی روک تھام کے لیے سائنسی اور تحقیقی میدان میں بھی پیش پیش رہا ہے ۔عرب ٹی وی کے مطابق مملکت کی کئی جامعات اس وقت کرونا کی وبا کی روک تھام کے لیے مختلف سائنسی طریقوں پر کام کر رہی ہیں۔ چند ماہ قبل عالمی سطح پر سعودی عرب کا شمار کرونا سے متعلق سائنسی تحقیقات کے میدان میں 17 ویں نمبر پر تھا اور آج اس میدان میں مزید آگے بڑھ کر سعودی عرب عالمی سطح پر 14 ویں نمبر پرآ گیا ہے ۔ اس طرح سعودی عرب جی20گروپ ...

کورونا پر تحقیق ، عرب دنیا میں سعودی عرب پہلے اور دنیا میں 14 ویں نمبر پر