وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

ایران کی سابق شہزادی اشرف پہلوی چل بسیں

هفته 09 جنوری 2016 ایران کی سابق شہزادی اشرف پہلوی چل بسیں

سابق شاہِ ایران شاہ محمد رضا پہلوی کی جڑواں بہن شہزادی اشرف پہلوی بالآخر طویل جلاوطنی ہی میں چل بسیں۔ ان کی عمر 96 سال تھی۔

ان کا تعلق اس خاندان سے تھا جنہوں نے 1979ء میں انقلاب آنے سے پہلے ایران میں ایسی زندگی گزاری تھی، جس کا کوئی مغرب میں بھی تصور نہیں کر سکتا لیکن جلاوطن ہونے کے بعد انہوں نے بدترین عہد دیکھا۔ انقلاب کے بعد کچھ ہی عرصے میں شہزادی اشرف کے بیٹے کو پیرس میں قتل کردیا گیا، پھر بھائی یعنی رضا پہلوی کینسر کی وجہ سے مارے گئے، پھر ایک بھتیجی 2001ء میں لندن میں نشے کی کثرت سے ماری گئی جبکہ ایک بھتیجے نے دس سال بعد بوسٹن میں خودکشی کرلی۔ یہ وہ خاندان تھا جو ایران کے سیاہ و سفید کا مالک تھا، جو مارے گئے، بری موت مارے گئے اور جو زندہ بچنے ان کا حال مردوں سے بھی بدتر تھا۔

شہزادی اشرف 26 اکتوبر 1919ء کو رضا شاہ کے ہاں پیدا ہوئیں، جو 1921ء میں برطانیہ کی مدد سے اقتدار پر قابض رہے اور بعد ازاں 1941ء میں برطانیہ اور روس کی مداخلت کے بعد بے دخل کردیے گئے۔ 1953ء میں امریکا نے ایران کے معروف منتخب وزیر اعظم محمد مصدق کا تختہ الٹا اور یوں محمد رضا پہلوی برسر اقتدار آئے۔ وہ اس وقت فیصلہ ساز شخصیت نہیں تھے، بلکہ ان میں فیصلہ کرنے کی طاقت موجود ہی نہیں تھی۔ لیکن شہزادی اشرف نے امریکی و برطانوی ایجنٹوں کے ساتھ مل کر سازش کو مکمل کیا اور بھائی پر سخت دباؤ ڈال کر انہیں تخت پر بٹھا دیا۔

شہزادی اشرف ایران کی ان اولین خواتین میں سے ایک تھیں، جو سر کھولے باہر آئيں اور یوں ایک قدامت پسند ملک میں روایتوں کو توڑنے والی بنیں۔ انہوں نے کئی ممالک میں ایران کے لیے سفارتی خدمات بھی انجام دیں اور کئی ممالک کے سفر بھی کیے۔ خاص طور پر وہ اپنی جوئے کی عادت کی وجہ سے بہت مشہور تھیں اور جوئے کے حلقوں میں بلیک پینتھر یعنی ‘سیاہ تیندوے’ کے نام سے مشہور تھیں۔ انقلاب کے بعد ان پر بدعنوانی کے الزامات بھی لگے اور کہا جاتا تھا کہ ان کے ایران کے کئی معروف اداکاروں اور مشہور شخصیات کے ساتھ تعلقات بھی تھے۔ البتہ انہوں نے ہمیشہ ان الزامات کی تردید کی اور اپنے بھائی کو اقتدار کا دفاع کیا۔

1977ء میں شہزادی اشرف پر فرانس میں ایک قاتلانہ حملہ ہوا، جس میں وہ بچ گئیں اور ان کا ڈرائیور زخمی ہوا۔ جب دو سال بعد شاہ ایران کو اقتدار سے ہٹا دیا گیا تو شہزادی پریس، نیو یارک اور مونٹی کارلو میں قیام کرتی رہیں۔ انہوں نے ایک آپ بیتی بھی لکھی۔ شہزادی اشرف نے تین شادیاں کیں، جن سے ان کے تین بچے پیدا ہوئے۔ پھر وہ آہستہ آہستہ منظرنامے سے ہٹتی چلی گئیں، یہاں تک کہ گزشتہ روز گمنامی میں انتقال کرگئیں۔

شاہ ایران محمد رضا شاہ پہلوی اپنی نئی دلہن ملکہ ثریا کے ساتھ، دائیں جانب شہزادی اشرف اور شہزادی شمس بیٹھی ہیں

شاہ ایران محمد رضا شاہ پہلوی اپنی نئی دلہن ملکہ ثریا کے ساتھ، دائیں جانب شہزادی اشرف اور شہزادی شمس بیٹھی ہیں


متعلقہ خبریں


مضامین
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

کامی یاب مرد۔۔
(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
کامی یاب مرد۔۔<br> (علی عمران جونیئر)

تری نگاہِ کرم کوبھی
منہ دکھانا تھا !
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
تری نگاہِ کرم کوبھی <br>منہ دکھانا تھا ! <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا
(ماجرا۔۔۔محمدطاہر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا<br> (ماجرا۔۔۔محمدطاہر)

وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔
(عمران یات..علی عمران جونیئر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔ <br>(عمران یات..علی عمران جونیئر)

طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی) قسط نمبر:3 وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی)  قسط نمبر:3

دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر)

سُکھی چین کے 70 سال سیاسی
(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
سُکھی چین کے 70 سال  سیاسی <Br>(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)

دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی!
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی! <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی) وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی)

اشتہار