وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar
سرحد پر نیٹو مشقیں، روس نے "تیسری عالمی جنگ" کی تیاری شروع کردی وجود - جمعرات 14 جولائی 2016

روس کی سرحدوں کے ساتھ افواج کی تعیناتی پر نیٹو رہنماؤں کے اتفاق کے بعد روس نے "تیسری عالمی جنگ" کے لیے ضروری تیاری شروع کردی ہیں۔ اضافی دستوں کی تعیناتی نیٹو کی تاریخ کی سب سے بڑی جنگی مشقوں 'ایناکونڈا 16' کے بعد ہو رہی ہے، جس میں 20 مختلف نیٹو ممالک کے 30 ہزار سے زیادہ فوجیوں نے پولینڈ میں دس روز تک حصہ لیا۔ ایناکونڈا 16 کو سرد جنگ کے بعد سب سے بڑی جنگی مشقیں کہا جا رہا ہے۔ روس کے صدر ولادیمر پوتن نے ان اقدامات کو جارحانہ اور خطرناک اور "اشتعال انگیز" قرار دیا ہے۔ روسی س...

سرحد پر نیٹو مشقیں، روس نے

روس نے جدید مسافر طیاروں کی دنیا میں قدم رکھ دیا وجود - جمعه 10 جون 2016

روس نے ایک نئے ہوائی جہاز کی رونمائی کی ہے جس کا مقصد ملک میں جہاز سازی کو ایک مرتبہ پھر فروغ دینا اور مغربی جہازوں پر انحصار کو کم کرنا ہے۔ ایم سی 21 نامی دو انجن رکھنے والا یہ ہوائی جہاز چھوٹے اور درمیانے درجے کا فاصلہ طے کرنے والا مسافر طیارہ ہے، جس کی رونمائی سائبیریا کے شہر ارکوتسک میں ہوئی۔ اسے ارکوت کارپوریشن نے بنایا ہے جو سرکاری یونائیٹڈ ایئرکرافٹ کارپوریشن کا حصہ ہے۔ پرانے سوویت ڈیزائنوں کے مقابلے میں یہ نیا جیٹ وزن کم رکھنے اور ایندھن کے استعمال میں موثر ہونے ک...

روس نے جدید مسافر طیاروں کی دنیا میں قدم رکھ دیا

روس نیوکلیئر جنگ چھیڑ سکتا ہے، سابق نیٹو جرنیل کا انتباہ وجود - جمعرات 19 مئی 2016

نیٹو کے سینئر ترین ریٹائرڈ جرنیلوں میں سے ایک نے کہا ہے کہ اگر بالٹک ریاستوں میں نیٹو نے اپنی دفاعی صلاحیتوں میں اضافہ نہ کیا تو ایک سال کے اندر روس کے ساتھ ایک نیوکلیئر جنگ کا خطرہ ہے۔ طبل جنگ بجاتے ہوئے 2011ء سے 2014ء تک یورپ میں نیٹو کے ڈپٹی سپریم الائیڈ کمانڈر رہنے والے جنرل رچرڈ شیرف نے کہا کہ اسٹونیا، لتھووینیا اور لیٹویا پر، جو سب نیٹو اراکین ہیں، حملہ کے سنجیدہ اماکنات ہیں اور مغرب کو ممکنہ سانحے سے بچنے کے لیے ابھی قدم اٹھانا ہوگا۔ ان کا یہ تبصرہ رومانیہ میں ...

روس نیوکلیئر جنگ چھیڑ سکتا ہے، سابق نیٹو جرنیل کا انتباہ

مشرقی یورپ میں نیٹو پیشقدمی کا بھرپور جواب دیں گے: روس کا اعلان وجود - جمعرات 05 مئی 2016

روس نے نیٹو کی جانب سے پولینڈ اور بحیرۂ بالٹک کے دیگر علاقوں میں مجوزہ فوجی موجودگی پر خبردار کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ تین نئے ڈویژنز مغربی و جنوبی علاقوں میں تعینات کرے گا۔ یہ نئے ڈویژن یوکرین، بیلاروس، جارجیا، فن لینڈ، آذربائیجان اور بالٹک ریاستوں کے ساتھ روس کی سرحدوں پر ہوں گے۔ وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے کہا کہ نیٹو کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ سے نمٹنے کے لیے رواں سال کے آخر تک یہ ڈویژنز تیار کرلیے جائیں گے۔ ماسکو کا کہنا ہے کہ نیٹو خطے میں اس کی سالمیت کو چیلنج کر رہ...

مشرقی یورپ میں نیٹو پیشقدمی کا بھرپور جواب دیں گے: روس کا اعلان

روسی طیاروں کی امریکی بحری جہاز کے قریب جارحانہ پروازیں وجود - جمعرات 14 اپریل 2016

روس کی فضائیہ کے طیارے بحیرۂ بالٹک میں بین الاقوامی سمندری حدود میں موجود امریکی بحری جہاز کے خطرناک حد تک قریب سے گزرے ہیں، جسے امریکا نے غیر پیشہ ورانہ قرار دیا ہے۔ امریکی حکام کے مطابق یہ جارحانہ پروازیں گزشتہ ہفتے کی گئی تھیں۔ جن میں ایک روسی ایس یو-24 طیارہ امریکی بحری جہاز یو ایس ایس ڈونلڈ کک سے صرف 30 فٹ یعنی 9 میٹر کے فاصلے سے گزرا۔ امریکی فوج کی یورپی کمان کا کہنا ہے کہ ہمیں روس کی فضائیہ کی ان غیر محفوظ اور غیر پیشہ ورانہ حرکتوں پر سنگین خدشات ہیں۔ یہ اقداما...

روسی طیاروں کی امریکی بحری جہاز کے قریب جارحانہ پروازیں

روس نے اچانک شام سے فوجیں واپس بلانے کا اعلان کردیا وجود - منگل 15 مارچ 2016

روس کے صدر ولادیمر پوتن نے سوموار کی شب اچانک شام سے روسی افواج کے انخلا کا اعلان کردیا ہے اور کہا ہے کہ ماسکو نے اپنے اہداف حاصل کرلیے ہیں۔ کریملن سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق صدر نے وزیر دفاع سرگئی شوئیگو اور وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کے ساتھ ملاقات کی، جس میں انہوں نے کہا کہ " وزارت دفاع اور مسلح افواج کو جو اہداف دیے گئے تھے وہ بنیادی طور پر حاصل کرلیے گئے ہیں، اس لیے میں وزیردفاع کو حکم دیتا ہے کہ کل سے شام میں موجود افواج کے اہم حصے کو واپس بلا لیں۔" اس اچا...

روس نے اچانک شام سے فوجیں واپس بلانے کا اعلان کردیا

روس اور شام کے معاہدے کی خفیہ تفصیلات منظر عام پر وجود - جمعه 15 جنوری 2016

روس اور شام نے گزشتہ اگست میں ایک معاہدہ کیا تھا جس کے بعد ماسکو کو خانہ جنگی کے شکار شام میں کھلی فوجی موجودگی کی اجازت ملی تھی اور گزشتہ چند ماہ میں روس نے کھلے بندوں شام میں کارروائیاں کی ہیں یہاں تک کہ ایک سرحدی تنازع میں ایک ترکی کے ہاتھوں ایک طیارہ بھی کھویا ہے۔ 26 اگست 2015ء کو دمشق میں ہونے والے معاہدے کی بیشتر تفصیلات منظر عام پر نہیں آئی تھیں لیکن اب روس میں معاہدے کا کچھ متن سامنے آیا ہے جس کے مطابق یہ معاہدہ لامحدود مدت کے لیے ہے۔ اس معاہدے کے لگ بھگ ایک م...

روس اور شام کے معاہدے کی خفیہ تفصیلات منظر عام پر

ترکی کو پچھتانا پڑے گا، اللہ ہی جانتا ہے طیارہ کیوں گرایا: ولادیمر پوتن وجود - جمعه 04 دسمبر 2015

روس کے صدر ولادیمر پوتن نے کہا ہے کہ ترکی کی قیادت کو روسی طیارہ گرانے پر پچھتانا پڑے گا۔ اللہ ہی جانتا ہے کہ انہوں نے یہ قدم کیوں اٹھایا اور اللہ نے ترک حکمرانوں کو سزا دینے کا فیصلہ کیا ہے اس لیے ان کی عقل اور ذہن کو ماؤف کردیا ہے۔ یہ انتہائی سخت بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب واقعے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان سفارتی سطح پر پہلی بار باضابطہ رابطہ ہوا ہے۔ روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاوروف اور ان کے ترک ہم منصب مولود جاووسوغلو کے درمیان بلغراد میں ملاقات ہوئی ہے۔ گو کہ اس سے خ...

ترکی کو پچھتانا پڑے گا، اللہ ہی جانتا ہے طیارہ کیوں گرایا: ولادیمر پوتن

مشرقی جزائر پر فوجی کمپاؤنڈز کی تیاری، روس-جاپان تعلقات کشیدہ وجود - جمعرات 03 دسمبر 2015

روس نے اپنے انتہائی مشرقی جزائر پر دو جدید فوجی کمپاؤنڈز کی تعمیر شروع کردی ہے۔ ان متنازع جزائر پر ہونے والی اس سرگرمی سے جاپان کے ساتھ طویل المیعاد تعلقات میں مزید تناؤ پیدا ہوگا۔ وزارت دفاع کی ویب سائٹ کے مطابق وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے کہا کہ روس اتورپ اور کوناشر کے جزائر میں فوجی کمپاؤنڈز کی تعمیر میں مصروف ہے۔ کیورل جزائر کے سلسلے کے ان چار انتہائی جنوبی جزائر کے معاملے پر ماسکو اور ٹوکیو کے تعلقات عرصے سے کشیدہ ہیں اور جاپان بھی ان جزائر پر دعویٰ رکھتا ہے۔ 19 ہزار ر...

مشرقی جزائر پر فوجی کمپاؤنڈز کی تیاری، روس-جاپان تعلقات کشیدہ

وڈیوز: تباہ شدہ روسی طیارے کے دونوں پائلٹ بھی مارے گئے وجود - منگل 24 نومبر 2015

ترکی کی جانب سے شامی سرحد پر ایک روسی طیارے کو مار گرائے جانے کی خبر اس وقت زبان زدِ عام ہے۔ نہ صرف اس کے نتائج پر بحث کی جا رہی ہے بلکہ سوشل میڈیا پر بھی ایک بازار گرم ہے۔ ابلاغ کے ان جدید ذرائع پر ہی دو ایسی وڈیوز سامنے آئی ہیں، جن سے روس کا غضب مزید بھڑکے گا۔ ایک وڈیو میں روسی پائلٹ کی لاش پر نعرے لگاتے شامی باغی ہیں تو دوسری وڈیو میں ایک روسی ہیلی کاپٹر کو تباہ کرتے دکھایا گیا ہے۔ ٹوئٹر پر پیش کی گئی پہلی وڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ روسی لڑاکا طیارے کی تباہی کے بعد زمین...

وڈیوز: تباہ شدہ روسی طیارے کے دونوں پائلٹ بھی مارے گئے

ہماری پیٹھ میں چھرا گھونپا گیا ہے، ترکی کو بھرپور جواب دیا جائے گا: روس وجود - منگل 24 نومبر 2015

شام-ترک سرحد پر روسی طیارے کے مار گرائے جانے کے بعد توقعات کے مطابق روس کی جانب سے انتہائی سخت ردعمل سامنے آیا، جس کے صدر ولادیمر پوتن نے نہ صرف ترکی پر داعش کی پشت پناہی کا الزام لگایا ہے بلکہ کہا ہے کہ ترکی کو اس کی حرکت کا جواب ضرور دیا جائے گا۔ ولادیمر پوتن اس وقت ساحلی شہر سوچی میں موجود ہیں، جہاں وہ اردن کے شاہ عبد اللہ دوئم کے ساتھ ملاقات کر رہے ہیں۔ یہ خبر موصول ہوتے ہی انہوں نے کہا ہے کہ "ہمارے فوجی دہشت گردوں کے خلاف جنگ میں اپنی جانیں خطرے میں ڈال رہے ہیں اور ...

ہماری پیٹھ میں چھرا گھونپا گیا ہے، ترکی کو بھرپور جواب دیا جائے گا: روس

ترکی نے روس کا لڑاکا طیارہ مار گرایا وجود - منگل 24 نومبر 2015

شام میں مقامی و عالمی طاقتوں کے درمیان جاری جنگ ایک نیا موڑ لے لیا ہے کیونکہ ترکی نے بارہا خبردار کیے جانے کے بعد بالآخر انتہائی قدم اٹھاتے ہوئے ایک روسی لڑاکا طیارے کو مار گرایا ہے۔ ترک ذرائع ابلاغ کے مطابق روس کا ایک ایس یو-24 لڑاکا طیارہ صوبہ حطائے کے مقام پر ترکی کی سرحدی حدود میں گھس آیا۔ فوجی ذرائع کے مطابق صرف 5 منٹ میں 10 مرتبہ اس جہاز کو آگاہ کیا گیا کہ وہ سرحدی حدود کی خلاف ورزی کر رہا ہے لیکن اس کے باوجود باز نہ آنے پر ایک ترک ایف-16 طیارے نے جہاز کو مار گرایا۔...

ترکی نے روس کا لڑاکا طیارہ مار گرایا

داعش کو 40 ممالک مدد فراہم کررہے ہیں، روسی صدر کا دعویٰ وجود - بدھ 18 نومبر 2015

روس کے صدر ولادیمر پوتن نے کہا ہے کہ ان کے پاس ایسی اطلاعات ہیں جن کے مطابق داعش کو 40 ممالک سے سرمایہ حاصل ہو رہا ہے، جن میں جی20 کے رکن ممالک بھی شامل ہیں۔ جی20 اجلاس میں شرکت کے لیے ترکی میں موجود روسی صدر نے صحافیوں سے گفتگو میں بتایا ہے کہ روس کے پاس ایسی انٹیلی جنس اطلاعات ہیں جن سے معلوم ہوتا ہے کہ داعش دولت کہاں سے حاصل کررہے ہیں اور انہوں نے یہ معلومات جی20 سربراہان مملکت کے سامنے پیش بھی کی ہیں۔ جن کے مطابق خلائی سیارچوں اور فضا میں ہوائی جہازوں سے لی گئی تصاویر...

داعش کو 40 ممالک مدد فراہم کررہے ہیں، روسی صدر کا دعویٰ

پیرس حملے، روس نے پہلے ہی خبردار کردیا تھا وجود - پیر 16 نومبر 2015

روس کی وزارت دفاع کی جانب سے ملک کی سلامتی کونسل کے پالیسی سازوں کے لیے جاری ہونے والی ایک نئی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ پیرس حملوں کا تعلق "علامتی قتل عام" سے ہو سکتا ہے اوراس کے لیے ہدایات فری میسنز کے خفیہ عناصر نے دی تھیں جو اس وقت امریکا کی سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی (سی آئی اے)، فرانس کی ڈائریکٹوریٹ آف ایکسٹرنل سیکورٹی(ڈی جی ایس ای)، برطانیہ کی خفیہ انٹیلی جنس سروس (ایس آئی ایس/ایم آئی6) اسرائیل کی ڈائریکٹوریٹ آف ملٹری انٹیلی جنس (ڈی ایم آئی اور ویٹی کن میں با اختیار...

پیرس حملے، روس نے پہلے ہی خبردار کردیا تھا

روسی طیارے میں گرنے سے پہلے دھماکا ہوا تھا، ماہرین وجود - بدھ 04 نومبر 2015

مصر کے صحرائے سینا میں تباہ ہونے والے روسی مسافر طیارے کا معاملہ ابھی تک واضح نہیں ہو سکا لیکن ملنے والی چند لاشوں کا تجزیہ کرنے والے ماہرین کہتے ہیں کہ ایسا لگتا ہے کہ زمین پر گرنے سےقبل جہاز میں کوئی دھماکا ہوا تھا۔ روسی ذرائع ابلاغ نے مصر کے فرانزک ماہرین کے حوالے سے بتایا ہے کہ ملنے والے کئی جسمانی اعضا کا معایَنہ ایسا ظاہر کرتا ہے کہ ان کی موت کسی دھماکے کے سبب ہوئی ہے۔ روس کا ایئربس اے 321 طیارہ گزشتہ سنیچر کو شرم الشیخ سے سینٹ پیٹرزبرگ روانہ ہوا تھا لیکن پرواز بھ...

روسی طیارے میں گرنے سے پہلے دھماکا ہوا تھا، ماہرین

روس کا مسافر طیارہ مصر میں گر کر تباہ، 224 مسافر ہلاک وجود - هفته 31 اکتوبر 2015

روس کا ایک مسافر طیارہ مصر کے جزیرہ نما سینا میں گر کر تباہ ہوگیا ہے جس سے سوار تمام 224 مسافر مارے گئے ہیں۔ یہ روس کی تاریخ کا بدترین فضائی حادثہ ہے۔ ہلاک شدگان میں 25 بچوں اور 140 خواتین کے علاوہ عملے کے 7 اراکین بھی شامل ہیں۔ زیادہ تر مسافر اپنے خاندانوں کے ساتھ سفر کررہے تھے جو تعطیلات منانے کے بعد ملک واپس جا رہے تھے۔ یہ افسوسناک واقعہ سنیچر کو علی الصبح پیش آیا جب بدقسمت طیارہ سیاحتی مقام شرم الشیخ سے روس کے شہر سینٹ پیٹرزبرگ کے لیے روانہ ہوا تھا۔ اڑانے بھرنے کے 23 ...

روس کا مسافر طیارہ مصر میں گر کر تباہ، 224 مسافر ہلاک

روس کی زبردست جنگی مشقیں، بین البراعظمی میزائلوں کے تجربات وجود - هفته 31 اکتوبر 2015

بدلتے ہوئے عالمی منظرنامے میں روس نے اپنی جنگی مشقیں شروع کردی ہیں جس کے دوران بیلسٹک اور کروز میزائلوں کے تجربات بھی کیے گئے جو ملک کے بڑھتے ہوئے فوجی عزائم کو ظاہر کررہے ہیں۔ شام میں فوجی مداخلت کے ذریعے ایک عالمی بحران جنم دینے والے روس کی وزارت دفاع کہتی ہے کہ مشقوں میں زمین، سمندر اور فضا سے مختلف میزائل داغ کر انہیں آزمایا گیا۔ یہ رواں سال روس کی سب سے بڑی فوجی مہم ہے۔ یہ جنگی مشقیں ایک ایسے موقع پر ہو رہی ہیں جب امریکا، سعودی عرب، ترکی، ایران اور درجن بھر ممالک کے سا...

روس کی زبردست جنگی مشقیں، بین البراعظمی میزائلوں کے تجربات

شام تنازع: امریکا کے دوغلے رویے پر روسی صدر کی کڑی تنقید وجود - هفته 24 اکتوبر 2015

روس کے صدر ولادیمر پیوتن نے امریکا میں شام کی تازہ ترین بمباری کا مضحکہ اڑاتے ہوئے کہا ہے کہ "دہشت گردی پر غلبہ پانا ناممکن ہے جب تک آپ اپنی ناپسندیدہ حکومتوں کا تختہ الٹنے کے لیے انہی دہشت گردوں کو ہتھیار کے طور پر استعمال کریں گے۔" مشرق وسطیٰ میں امریکا کی دیوانہ وار مداخلت پر مہارت سے طنز کرتے ہوئے پیوتن نے کہا کہ "ڈبل گیم کھیلنا ہمیشہ مشکل ہوتا ہے، ایک ہی وقت میں دہشت گردوں کے خلاف اعلانِ جنگ بھی، اور اسی دوران چند ایسے مہروں کو استعمال بھی کرنا تاکہ مشرق وسطیٰ کے کھی...

شام تنازع: امریکا کے دوغلے رویے پر روسی صدر کی کڑی تنقید

روس عالمی انٹرنیٹ سے غائب وجود - منگل 20 اکتوبر 2015

روس چند ایسے تجربات کررہا ہے جن کے ذریعے وہ دیکھے گاکہ وہ ورلڈ وائیڈ ویب سے نکل سکتا ہے یا نہیں تاکہ ملک کے اندر اور بیرون ملک معلومات کی ترسیل کو گھٹایا جا سکے۔ ماہرین نے برطانیہ کے روزنامہ ٹیلی گراف کو بتایا ہے کہ یہ تجربات کسی بھی ممکنہ مقامی سیاسی بحران کی صورت میں معلومات کو مکمل طور پر اپنے اختیار میں رکھا جا سکے اور اس سے بھی بڑھ کر مقصد یہ تھا کہ عالمی ناٹرنیٹ سے جدا ہونے کے بعد روس کا انٹرنیٹ کام جاری رکھ سکتا ہے یا نہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ اس خاص تجربے کا حکم...

روس عالمی انٹرنیٹ سے غائب

شام کی صورتحال، روس کے مسلمان منقسم وجود - بدھ 07 اکتوبر 2015

شام کے تنازع میں روس کی براہ راست مداخلت روسی مسلمانوں کو مزید تقسیم کررہی ہے۔ گو کہ روس میں موجود مسلمان کبھی متحد نہیں رہے لیکن تازہ ترین صورتحال نے اس خلیج کو مزید گہرا کردیا ہے۔ روس نے ایک ہفتہ قبل شام میں فضائی حملوں کا آغاز کیا تھا جس کے بارے میں ماسکو کا دعویٰ ہے کہ وہ دولت اسلامیہ (داعش) اور دیگر شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو ہدف بنا رہا ہے جبکہ ترکی اور نیٹو کے دیگر رکن ممالک کو خطرہ ہے کہ حقیقی ہدف شامی صدر بشار الاسد کے خلاف برسر پیکار شامی گروہ ہیں۔ 2011ء کی م...

شام کی صورتحال، روس کے مسلمان منقسم

روس: یورپ کی بڑی مساجد میں سے ایک کا افتتاح وجود - منگل 29 ستمبر 2015

روس کے دارالحکومت ماسکو میں یورپ کی سب سے بڑی مساجد میں سے ایک کا افتتاح کیا گیا ہے۔ ماسکو مسجد کے شاندار افتتاح کے موقع پر صدر ولادیمر پیوتن کے علاوہ ترکی کے صدر رجیب طیب اردوغان اور فلسطین کے صدر محمود عباس بھی موجود تھے۔ 20 ہزار مربع میٹر کے وسیع رقبے پر پھیلی اس مسجد میں 10 ہزار نمازیوں کی گنجائش ہے اوریوں یہ براعظم یورپ کی بڑی مساجد میں سے ایک ہے۔ ولادیمر پیوتن نے اس موقع پر خطاب میں کہا کہ "یہ مسجد ماسکو اور ملک بھر کے مسلمانوں کے لیے روحانی مرکز کی حیثیت اختیار...

روس: یورپ کی بڑی مساجد میں سے ایک کا افتتاح